سڈنی: سر پر گیند لگنے سے فل ہیوز زخمی، حالت نازک

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption جب ہیوز کے سر پر گیند لگی تو وہ پہلے گھٹنوں پر جھکے اور پھر منھ کے بل زمین پر گر پڑے

آسٹریلوی بلے باز فلپ ہیوز سڈنی میں ہونے والے میچ میں سر پر گیند لگنے سے شدید زخمی ہوگئے ہیں اور ہسپتال میں ان کی حالت نازک بتائی جا رہی ہے۔

ان کے سر پر شیفیلڈ شیلڈ کے ایک میچ کے دوران نیو ساؤتھ ویلز کے بولر شان ایبٹ کا باؤنسر لگا تھا جس سے وہ پچ پر گر پڑے تھے۔

انھیں سٹریچر پر میدان سے باہر لے جایا گیا اور پھر فوراً ایمبولنس پر ہسپتال منتقل کیا گیا جہاں ان کی سرجری ہوئی ہے۔

سڈنی کرکٹ گراؤنڈ پر جاری شیفیلڈ شیلڈ کے اس میچ کو منسوخ کر دیا گیا ہے۔

فل ہیوز نے 2009 سے سنہ 2013 کے درمیان 26 ٹیسٹ ميچوں میں آسٹریلیا کی نمائندگی کرتے ہوئے تین سنچریوں اور سات نصف سنچریوں کی مدد سے ڈیڑھ ہزار سے زیادہ رنز بنائے ہیں۔

جنوبی آسٹریلوی کرکٹ ایسوسی ایشن کے جنرل منیجر ٹم نیلسن نے بتایا: ’سرجری کا نتیجہ آنے والے 24 سے 48 گھنٹوں سے پہلے نہیں بتایا جا سکتا۔ میں چاہتا ہوں کہ آپ ان کےاہل خانہ اور دوستوں کے تخلیے میں مخل نہ ہوں۔‘

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption انھیں فوراً ہی قریب میں موجود فیلڈروں نے گھیر لیا اور مدد کے لیے اشارہ کیا

ہیوز نے گذشتہ مہینے پاکستان کے خلاف متحدہ عرب امارات میں ایک روزہ میچوں میں شرکت کی تھی اور خیال ظاہر کیا جا رہا تھا کہ اگر آسٹریلوی کپتان مائیکل کلارک بھارت کے خلاف پہلے میچ میں کھیلنے کے لیے فٹ نہیں ہوئے تو انھیں موقع دیا جا سکتا ہے۔

جب ہیوز کے سر پر گیند لگی تو وہ پہلے گھٹنوں پر جھکے اور پھر منھ کے بل زمین پر گر پڑے۔ انھیں فوراً ہی قریب میں موجود فیلڈروں نے گھیر لیا اور مدد کے لیے امپائروں نے اشارہ کیا۔

اس کے بعد انھیں سڈنی کے سنٹ ونسنٹ ہسپتال لے جایا گیا۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption فل ہیوز نے 2009 سے سنہ 2013 کے درمیان 26 ٹیسٹ ميچوں میں آسٹریلیا کی نمائندگی کی ہے

کرکٹ آسٹریلیا کے چیف ایگزیکٹیو جیمز سدرلینڈ نے کہا: ’ہماری نیک خواہشات اور دعائیں فل ہیوز کے ساتھ ہیں۔ ہمیں آسٹریلوی کرکٹ فیملی میں ان کے اہلِ خانہ، ٹیم کے ساتھی کھلاڑیوں اور دوستوں کا بھی خیال ہے۔‘

انھون نے مزید کہا: ’ہماری اولین ترجیح یہ ہے کہ وہ صحت یاب ہو جائیں۔‘

آسٹریلوی کوچ ڈیرن لیمین نے ٹوئٹر پر کہا: ’ہماری نیک خواہشات اور دعائیں فل اور ان کے اہل خانہ کے ساتھ ہیں۔ وہ بڑے جانباز اور ہونہار نوجوان ہیں۔‘

اسی بارے میں