باؤنسر کو مزید محدود کرنے کے امکانات کم ہیں: آئی سی سی

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption آج کل بولروں کو ون ڈے اور ٹیسٹ میچوں میں ایک اوور میں دو باؤنسر اور ٹی ٹوئنٹی میں ایک باؤنسر کرنے کی اجازت ہے

آسٹریلوی کھلاڑی فلپ ہیوز کے باؤنسر سے زخمی ہونے کے بعد موت واقع ہونے کے باجود آئی سی سی کے چیف ایگزیکٹیو نے کہا ہے کہ باؤنسر کو مزید محدود کرنے کے امکانات کم ہیں۔

آسٹریلوی بیٹسمین فلپ ہیوز منگل کو سڈنی میں ایک فرسٹ کلاس کرکٹ میچ کے دوران سر پر شدید چوٹ لگنے کے دو روز بعد جمعرات کو چل بسے تھے۔

انٹرنیشنل کرکٹ کونسل کے چیف ایگزیکٹیو آفیسر ڈیوڈ رچرڈسن نے بی بی سی فائیو کے پروگرام سپورٹ ویک میں بتایا کہ باؤنسر پر پابندی کا امکان کم ہے۔

خیال رہے کہ آج کل بولروں کو ون ڈے اور ٹیسٹ میچوں میں ایک اوور میں دو باؤنسر اور ٹی ٹوئنٹی میں ایک باؤنسر پھینکنے کی اجازت ہے۔

جب ڈیوڈ رچرڈسن سے پوچھا گیا کہ باؤنسر پر مزید کسی پابندی لگانے کا امکان ہے تو انھوں نے کہا کہ ’اس پر بات کرنا قبل از وقت ہے لیکن میرا ابتدائی ردِ عمل یہی ہوگا کہ ایسا ہونا مشکل ہے۔‘

انھوں نے کہا کہ ’اس سے پہلے دل پر بال لگنے سے بھی لوگ مرے ہیں۔ میرا نہیں خیال کہ اس پر شدید ردِ عمل ظاہر کیا جائے، بلکہ ہمیں وہی کرنا چاہیے جو ہم کر سکتے ہیں۔‘

سابق آسٹریلوی وکٹ کیپر گل کرسٹ نے بھی باؤنسر کے استعمال کا دفاع کرتے ہوئے اسے ’بال اور بیٹ کے درمیان چیلنج کا حصہ‘ قرار دیا۔

انھوں نے بی بی سی فائیو کے سپورٹس ویک کو بتایا کہ کہ کرکٹ کے منتظمین کے لیے ہیلمٹ میں تبدیلی لانے کے مشورے پر غور کرنا زیادہ قابل قبول ہوگا۔

انھوں نے کہا کہ ’ہم پہلے چہرے، گال اور کھوپڑی کو بچانے کی بات کر رہے تھے جو اب ایک مسئلہ ہے لیکن ہم اس طریقوں کو ڈھونڈ رہے ہیں جس سے گلے پر لگنے والی گیندوں کو بھی روکا جا سکے۔‘

اسی بارے میں