دیر سے ہوٹل لوٹنے پر آفریدی سمیت آٹھ کھلاڑیوں پر جرمانہ

تصویر کے کاپی رائٹ
Image caption ٹیم کے آٹھ کھلاڑی کو کھانے پر مدعو کیا گیا تھا جہاں سے وہ دیر سے لوٹے۔ دیر سے واپسی پر ٹیم مینیجمنٹ نے کھلاڑیوں پر جرمانہ عائد کر دیا

آسٹریلیا اور نیوزی لینڈ میں کھیلے جانے والے کرکٹ ورلڈ کپ سے قبل پاکستانی ٹیم کی مینیجمنٹ نے ٹیم کے آٹھ کھلاڑیوں پر کرفیو توڑنے پر جرمانہ عائد کیا ہے۔

بی بی سی اردو سے بات کرتے ہوئے ٹیم مینیجمنٹ کے ایک اہلکار نے نام ظاہر نہ کرنے کی شرط پر بتایا کہ یہ واقعہ ایک ہفتے قبل آسٹریلیا کے شہر سڈنی میں پیش آیا تھا۔

ان کا کہنا تھا کہ ٹیم کے کھلاڑیوں کو کھانے پر مدعو کیا گیا تھا جہاں سے وہ دیر سے لوٹے۔ دیر سے واپسی پر ٹیم مینیجمنٹ نے کھلاڑیوں پر جرمانہ عائد کیا ہے۔

پاکستانی ٹیم آج یعنی جمعرات کو سڈنی سے ایڈیلیڈ پہنچی ہے جہاں وہ جمعے کو پریکٹس کرے گی۔

فرانسیسی خبر رساں ایجنسی اے ایف پی کے مطابق جن آٹھ کھلاڑیوں پر جرمانہ عائد کیا گیا ہے ان میں شاہد آفریدی اور احمد شہزاد بھی شامل ہیں۔

اے ایف پی کے بقول ان کھلاڑیوں پر اتوار کو سڈنی کے ہوٹل میں دیر سے آنے پر 300 آسٹریلین ڈالر کا جرمانہ عائد کیا گیا ہے۔

یہ کھلاڑی طے شدہ وقت سے 45 منٹ دیر سے آئے۔

اے ایف پی کے بقول کھلاڑیوں نے اپنی غلطی تسلیم کرتے ہوئے معافی مانگی اور دوبارہ غلطی نہ کرنے کا وعدہ کیا ہے۔

پاکستان ورلڈ کپ کے گروپ بی میں شامل ہے جہاں اس کا مقابلہ روایتی حریف ہندوستان، ویسٹ انڈیز، جنوبی افریقہ، آئرلینڈ، زمبابوے اور متحدہ عرب امارات سے ہو گا۔

پاکستان اپنا پہلا میچ 15 فروری کو بھارت کے خلاف ایڈیلیڈ کے مقام پر کھیلے گا۔

اسی بارے میں