آسٹریلیا نے 275 رنز سے افغانستان کو شکست دے دی

Image caption ڈیوڈ وارنر نے جارحانہ بلے بازی کا مظاہرہ کیا اور وارنر 19 چوکوں اور پانچ چھکوں کی مدد سے 178 رنز بنائے۔

کرکٹ کے عالمی کپ کے پول اے میں آسٹریلیا نے افغانستان کو فتح کے لیے 418 رنز کا ہدف فراہم کیا ہے۔

آسٹریلوی اننگز کی خاص بات وارنر، سمتھ اور میکسویل کی شاندار بلے بازی تھی۔

میچ کا تفصیلی سکور کارڈ

افسر زازئی کی جگہ شاہ پور زدران بیٹنگ کے لیے کریز پر آئے ہیں جو جوش ہیزل وُڈ کی بال کا سامنا کریں گے مگر وہ 37ویں اوور کی تیسری بال پر مچل جانسن کی بال پر حامد حسن کے آؤٹ ہونے کے نتیجے میں کوئی رن بنائے بغیر ناٹ آؤٹ رہے۔

افغان ٹیم نے 36ویں اوور کی دوسری بال پر افسر زازئی کو جوش ہیزل وُلا کی بال پر کھویا اور 140 رنز پر اس کی 9 وکٹیں گر چکی ہیں۔

36 اوورز کے بعد افغانستان کی ٹیم 8 وکٹوں کے نقصان پر 140 رنز بنا پائی ہے۔ آسٹریلیا کے بالروں میں سے مچل جانسن نے تین جبکہ مچل سٹارک اور جوش ہیزل وُڈ نے دو دو وکٹیں حاصل کیں۔

34 اوورز کے بعد افغانستان کی ٹیم 137 رنز بنانے میں کامیاب ہوئی ہے۔ جس کے بعد میچ میں وقفہ ہے۔

33ویں اوور کے اختتام پر افغانستان نے 135 رنز بنائے اور اُن کی 8 وکٹیں گر چکی ہیں۔

32ویں اوور کی پہلی بال پر نجیب اللہ زدران مچل سٹارک کی بال پر آؤٹ ہو گئے انہوں نے 24 رنز بنائے جبہ پانچویں بال پر دولت زدران بھی بغیر کوئی رن بنائے پویلین واپس پہنچے۔ مجموعی سکور 7 وکٹوں کے نقصان پر 131 تک پہنچا ہے۔

31ویں اوور کی تیسری بال پر نجیب اللہ زدران نے میکسویل کو چھکا مارا اور مزید تین رنز کے اضافے کے بعد مجموعی سکور 131 تک پہنچا ہے۔

30ویں اوور کے بعد افغانستان کا مجموعی سکور میں صرف ایک اور رن کا اضافہ ہوا۔

29 اوورز کے بعد افغانستان مجموعی سکور میں صرف 1 رن کا اضافہ کر سکا ہے۔

28 اوورز کے بعد افغانستان کا مجموعی سکور 120 رنز ہے اور اس کی چھ وکٹیں گر چکی ہیں۔ اس وقت کریز پر نجیب اللہ زدران اور افسر زازئی موجود ہیں۔

27ویں اوور کے بعد افغانستان کی ٹیم 116 رنز بنانے میں کامیاب ہوئی ہے جس میں اس اوور کی آخری بال پر چوکا مارا اور اس کی 6 وکٹیں گر چکی ہیں۔

26ویں اوور کے اختتام پر افغانستان کی ٹیم 105 رنز بنانے میں کامیاب ہوئی ہے اور اس کے 6 کھلاڑی آؤٹ ہو چکے ہیں۔

افغانستان کی ایک اور وکٹ 25ویں اوور کی دوسری بال پر گری جب محمد نبی میکسویل کی بال پر کلارک کے ہاتھوں کیچ آؤٹ ہو گئے۔

24ویں اوور کے اختتام پر مجموعی سکور میں صرف ایک رن کا اضافہ ہوا ہے۔

23ویں اوور کے اختتام پر افغانستان 5 وکٹوں کے نقصان پر 102 رنز بنانے میں کامیاب ہوا ہے۔

22ویں اوور کے اختتام پر افغانستان نے 97 رنز بنائے ہیں اور اس کی آدھی ٹیم پویلین واپس پہنچ چکی ہے۔

افغانستان کی اوپر تلے دونوں وکٹیں گرنے کے بعد محمد نبی اور نجیب اللہ زدران کریز پر آئے ہیں جبکہ بالنگ مچل مارش اور مائیکل کلارک کے درمیان اوور کی بنیاد پر ہو رہی ہے۔

21ویں اوور کی پہلی بال پر نوروز مینگل 33 کے سکور پر پویلین واپس پہنچے اُن کا کیچ فنچ نے پکڑا اور یوں اوپر تلے دو وکٹوں کے نقصان پر مجموعی سکور 94 رنز ہیں۔

20ویں اوور کی چوتھی بال پر مائیکل کلارک کا بال پر سمیع اللہ شنواری مچل جونسن کے ہاتھوں کیچ آوٹ ہو گئے۔ 418 رنز کے تعاقب میں افغانستان کے 4 وکٹوں کے نقصان پر 94 رنز ہیں۔

19ویں اوور کی آخری بال پر سمیع اللہ شنواری نے جونسن کو چوکا مارا اور اوور کے اختتام پر مجموعی سکور 93 رنز تک پہنچایا۔

18ویں اوور کے لیے مائیکل کلارک نے سمیع اللہ شنواری کو بالنگ کروائی اور اس اوور میں صرف تین رنز کا اضافہ ہوا اور مجموعی سکور 88 رنز تک پہنچا۔

17ویں اوور میں پہلی بال پر سمیع اللہ شنواری نے مچل مارش کو شاٹ ماری اور دو رنز بنائے اور اس کے بعد پورے اوور میں صرف ایک مذید رن کا اضافہ ہو سکا۔ مجموعی سکور 85 رنز 3 وکٹوں کے نقصان پر۔

16 گوورز کے بعد افغانستان 82 رنز بنانے میں کامیاب ہوا ہے اور اس کی تین وکٹیں گری ہیں۔ سمیع اللہ اور نورز جم کر بیٹنگ کر رہے ہیں مگر سکور میں اضافے کی رفتار ابھی سست ہے۔

پندرہ اوورز کے بعد افغانستان کا سکور 78 رنز اور اس کی تین وکٹیں گری ہیں۔ مچل مارش اور مائیکل کلارک اوورز کروا رہے ہیں جبکہ موجودہ پارٹنرشپ 33 رنز کی ہو چکی ہے۔

چوہویں اوور کے اختتام پر افغانستان نے 71 رنز بنائے ہیں اور اس کی تین وکٹیں گر چکی ہیں اس وقت کریز پر نوروز مینگل اور سمیع اللہ شنواری موجود ہیں۔

افغانستان کی جانب سے احمدی اور غنی اس وقت کریز پر موجود ہیں۔ اب سے کچھ دیر قبل افغانستان نے دو اوورز میں بغیر کسی نقصان کے آٹھ رنز بنائے تھے۔

پرتھ میں کھیلے جانے والے میچ میں افغانستان نے ٹاس جیت کر آسٹریلیا کو پہلے کھیلنے کی دعوت دی تو اس نے مقررہ 50 اوورز میں چھ وکٹوں کے نقصان پر 417 رنز بنائے۔

آسٹریلیا کو اننگز کے آغاز میں فنچ کی وکٹ سے محروم ہونا پڑا تاہم اس کے بعد وارنر اور سمتھ نے 260 رنز کی شراکت قائم کی۔

ڈیوڈ وارنر 19 چوکوں اور پانچ چھکوں کی مدد سے 133 گیندوں پر 178 رنز کی اننگز کھیل کر آؤٹ ہوئے جبکہ سمتھ پانچ رنز کی کمی سے سنچری مکمل نہ کر سکے۔

اس کے بعد میکسویل نے جارحانہ انداز میں بلے بازی کی اور 39 گیندوں پر چھ چوکوں اور سات چھکوں کی مدد سے 88 رنز بنا ڈالے۔

افغانستان کی جانب سے شاہ پور زدران اور دولت زدران نے دو، دو جبکہ حامد حسن نے ایک وکٹ لی۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption گلین میکسویل نے جارحانہ انداز میں بلے بازی کی اور 39 گیندوں پر 88 رنز بنا ڈالے۔

اس میچ کے لیے افغانستان کی ٹیم میں ایک تبدیلی کی گئی ہے اور گلبدین نائب کی جگہ عثمان غنی یہ میچ کھیل رہے ہیں۔

آسٹریلوی ٹیم نے بھی دو تبدیلیاں کی ہیں اور پیٹ کمنز کی جگہ جوش ہیزل وڈ اور شین واٹسن کی جگہ فالکنر کو ٹیم میں جگہ ملی ہے۔

یہ اس ٹورنامنٹ میں دونوں ٹیموں کا چوتھا میچ ہے۔

افغانستان کی ٹیم پہلی بار کرکٹ ورلڈ کپ میں حصہ لے رہی ہے اور وہ اب تک تین میں سے دو میچ ہاری ہے جبکہ سکاٹ لینڈ کو ہرا کر اس نے ورلڈ کپ میں اپنی پہلی فتح حاصل کی تھی۔

آسٹریلیا کی ٹیم پول اے میں اس وقت چوتھے نمبر پر ہے۔ اب تک کھیلے گئے تین میچوں میں سے صرف وہ انگلینڈ کے خلاف ہی فتح کا ذائقہ چکھ سکی ہے۔

بنگلہ دیش کے خلاف آسٹریلیا کا میچ بارش کی وجہ سے منسوخ ہوگیا تھا جبکہ پول اے میں سرفہرست نیوزی لینڈ کی ٹیم نے ایک سنسنی خیز مقابلے کے بعد آسٹریلیا کو ایک وکٹ سے ہرایا تھا۔

اسی بارے میں