آسٹریلوی بیٹنگ بھارت کے قابو میں آئے گی؟

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption سڈنی میں بھارتی ٹیم کا ون ڈے ریکارڈ بہت خراب رہا ہے۔ اس نے 35 سال میں صرف ایک بار آسٹریلیا کو شکست دی ہے

عالمی بھارت اور آسٹریلیا کے درمیان ورلڈ کپ کا دوسرا سیمی فائنل جمعرات کے روز سڈنی کرکٹ گراؤنڈ میں کھیلا جا رہا ہے۔

یہ میچ جیتنے والی ٹیم 29 مارچ کو میلبرن میں ہونے والے فائنل میں نیوزی لینڈ کے مدمقابل ہوگی جس نے منگل کو آکلینڈ میں کھیلے گئے پہلے سیمی فائنل میں جنوبی افریقہ کو سنسنی خیز مقابلے کے بعد آخری اوور میں چار وکٹوں سے شکست دی۔

کیا سیمی فائنل میں بھارت آسٹریلیا کو ہرا سکے گا؟

مہندر سنگھ دھونی کی قیادت میں بھارتی ٹیم نے اس عالمی کپ میں شاندار کارکردگی کا مظاہرہ کرتے ہوئے اب تک تمام سات میچز جیتے ہیں۔

بھارتی ٹیم اس عالمی کپ کی واحد ٹیم ہے جس نے ساتوں میچوں میں اپنی حریف ٹیموں کو آل آؤٹ کیا ہے۔

جن تین میچوں میں بھارتی ٹیم نے پہلے بیٹنگ کی ہے ان میں اس نے300 سے زائد کا سکور بھی بنایا ہے۔

بھارتی بیٹسمینوں میں شیکھر دھون دو سنچریوں اور ایک نصف سنچری کی مدد سے 367 رنز کے ساتھ قابل ذکر ہیں جبکہ بولنگ میں شامی 17 یادو 14 اشون 12 اور موہیت شرما 11 وکٹوں کے ساتھ نمایاں ہیں۔

Image caption بولنگ میں مچل سٹارک نے 18 وکٹیں حاصل کر رکھی ہیں

آسٹریلوی ٹیم نے اپنے پول میں چار میچ جیتے۔ وہ نیوزی لینڈ سے ایک وکٹ سے میچ ہاری جبکہ بنگلہ دیش کے خلاف اس کا میچ بارش کی نذر ہوگیا۔

اس نے افغانستان کے خلاف 417 رنز کا سکور بنایا جو اس عالمی کپ کا اب تک سب سے بڑا سکور بھی ہے۔ انگلینڈ اور سری لنکا کے خلاف بھی اس نے300 سے زائد رنز سکور کیے۔

آسٹریلیا کی طرف سے ابتک بیٹنگ میں گلین میکسویل 301 رنز بنا کر نمایاں ہیں۔ بولنگ میں مچل سٹارک نے 18 وکٹیں حاصل کر رکھی ہیں۔ مچل جانسن کی 10 وکٹیں ہیں۔

Image caption آسٹریلیا کی طرف سے ابتک بیٹنگ میں گلین میکسویل 301 رنز بنا کر نمایاں ہیں

ورلڈ کپ مقابلوں میں بھارت اور آسٹریلیا کے درمیان دس میچز کھیلے جا چکے ہیں جن میں سات آسٹریلیا نے اور تین بھارت نے جیتے ہیں۔

گذشتہ عالمی کپ میں دونوں ٹیموں کے درمیان کوارٹرفائنل میں مقابلہ ہوا تھا جس میں بھارت نے پانچ وکٹوں سے کامیابی حاصل کی تھی۔

سڈنی میں بھارتی ٹیم کا ون ڈے ریکارڈ بہت خراب رہا ہے۔ اس نے 35 سال میں صرف ایک بار آسٹریلیا کو شکست دی ہے جب 2008 میں سچن تندولکر کی ناقابل شکست سنچری کی بدولت اس نے کامیابی حاصل کی تھی۔

اسی بارے میں