’پیکاؤ بزدل ہے، اب اس سے مقابلہ نہیں ہوگا‘

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption 50 ناقابلِ شکست لڑائیاں آپ کے لیے تو خاص ہو سکتی ہیں لیکن میرے لیے نہیں

مشہور امریکی باکسر فلوئڈ مے ویدر نے کہا کہ وہ اپنے کریئر کا آخری میچ مقابلہ ستمبر میں کریں گے لیکن ان کا حریف ’بزدل‘ مینی پیکاؤ نہیں ہوگا۔

مے ویدر نے باکسنگ کی تاریخ کے سب سے مہنگا مقابلہ جیتنے کے بعد عندیہ دیا تھا کہ وہ مینی پیکاؤ سے ایک بار پھر مقابلے کرنے کے لیے تیار ہیں۔

مے ویدر نے کہا کہ شکست کے بعد مینی پیکاؤ کی بہانہ بازی نے انھیں ناراض کیا ہے۔ انھوں نے کہا کہ انھیں مقابلہ کے دوران کہیں ایسا محسوس نہیں ہوا کہ ان کے حریف زخمی ہیں کیونکہ ان کے دونوں ہاتھ تیزی اور طاقت سے چل رہے تھے۔

مینی پیکاؤ نے میچ کے بعد کہا تھا کہ ان کا کندھا زخمی تھی جس کی وجہ سے وہ اچھے کھیل کا مظاہرہ نہ کرسکے۔ میچ کے بعد مینی پیکاؤ کے کندھے کا آپریشن ہو چکا ہے اور اسے دوبارہ رنگ میں اترنے کے لیے کم از کم ایک سال کا عرصہ درکار ہوگا۔

برطانوی باکسر عامر خان مے ویدر سے مقابلہ کرنے کے خواہش مند ہیں۔ مے ویدر کے والد فلوئڈ مے ویدر سینیئر نے کہا تھا کہ اس کے بیٹے کو اپنے کریئر کا آخری مقابلہ عامر خان سے کرنا چاہیے۔

عامر خان نے کہا تھا کہ وہ رمضان کی وجہ سے ستمبر میں مقابلے میں تیار نہیں پائیں گے لیکن بعد میں انھوں نے اپنا موقف بدل لیا ہے۔ عامر خان کو رواں ماہ کی 29 تاریخ کو کرس ایلگیری سے مقابلہ کرنا ہے۔ اگر عامر خان کرس ایلگیری سے جیت گئے تو ان کے ستمبر میں مے ویدر سے مقابلے کے امکانات روشن ہو جائیں گے۔

مینی پیکاؤ کے بیان کے بعد امریکی ریاست نیواڈا میں ان کے خلاف متعد دعوے دائر کیےجا چکے ہیں جن میں موقف اختیار کیا گیا ہے کہ باکسر نے اپنے کندھے کے زخم کو چھپا کر’بدیانتی‘ کا مظاہرہ کیا ہے۔

اگر یہ ثابت ہو گیا کہ مینی پیكیؤ نے اپنے زخم کو مکمل طور پر سمجھتے ہوئے چھپایا تو وہ دھوکہ دہی کے جرم میں ایک سے چار برس تک جیل بھی جا سکتے ہیں اور ان پر پانچ ہزار ڈالر جرمانہ عائد کیا جا سکتا ہے۔

اسی بارے میں