کرکٹ ٹیم کی سری لنکا روانگی، ’ سخت مقابلے‘ کا امکان

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption سری لنکا اپنے ملک میں ایک مضبوط ٹیم ہے اور پاکستانی ٹیم کو جیتنے کے لیے اپنی تمام تر صلاحیتوں کو بروئے کار لانا ہوگا: وقار یونس

پاکستانی کرکٹ ٹیم پیر کی شب سری لنکا کے دورے پر روانہ ہورہی ہے اور کوچ وقاریونس کا کہنا ہے کہ سری لنکا میں سیریز آسان نہیں ہوگی کیونکہ سری لنکن ٹیم اپنے ہوم گراؤنڈ پر ایک مضبوط ٹیم رہی ہے۔

پاکستانی ٹیم سری لنکا میں تین ٹیسٹ پانچ ون ڈے اور دو ٹی 20 انٹرنیشنل کھیلے گی۔

سلیکشن کمیٹی نے پہلے مرحلے میں مصباح الحق کی قیادت میں ٹیسٹ ٹیم کا اعلان کیا ہے جبکہ محدود اوورز کے میچوں کے لیے ٹیم کا اعلان بعد میں کیا جائے گا۔

یاد رہے کہ پاکستانی ٹیم نے آخری بار سری لنکا کی سرزمین پر ٹیسٹ سیریز 2006 میں انضمام الحق کی قیادت میں جیتی تھی۔ اس کے بعد سے دونوں ٹیموں کے درمیان چھ ٹیسٹ سیریز کھیلی جاچکی ہیں جن میں سے سری لنکا نے اپنے ملک میں تینوں ٹیسٹ سیریز جیتی ہیں پاکستان نے 2011 میں متحدہ عرب امارات میں کھیلی گئی ٹیسٹ سیریز جیتی جبکہ دو ٹیسٹ سیریز برابر رہی ہیں۔

وقاریونس کا کہنا ہے کہ پاکستان اور سری لنکا کی ٹیمیں اس وقت تشکیل نو کے مرحلے میں ہیں کیونکہ دونوں ٹیموں کے چند اہم کھلاڑیوں نے بین الاقوامی کرکٹ کو خیرباد کہا ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption پاکستانی ٹیم نے آخری بار سری لنکا کی سرزمین پر ٹیسٹ سیریز 2006 میں انضمام الحق کی قیادت میں جیتی تھی

انھوں نے کہا کہ سری لنکا اپنے ملک میں ایک مضبوط ٹیم ہے اور پاکستانی ٹیم کو جیتنے کے لیے اپنی تمام تر صلاحیتوں کو بروئے کار لانا ہوگا۔

وقاریونس نے کہا کہ انھیں امید ہے کہ ون ڈے سیریز تک فاسٹ بولرز فٹ ہوجائیں گے۔

و اضح رہے کہ ورلڈ کپ کے بعد سے پاکستانی ٹیم کو محمد عرفان ۔ راحت علی اور سہیل خان کی خدمات حاصل نہیں ہیں۔

وقاریونس نے کہا کہ فاسٹ بولرز کے ان فٹ ہونے کے ساتھ پاکستان کے لیے سب سے بڑا دھچکہ آف اسپنر سعید اجمل کے بولنگ ایکشن پر اعتراض کی شکل میں لگا جس نے ٹیم کی کارکردگی پر گہرا اثر ڈالا ہے۔

وقاریونس کا کہنا ہے کہ زمبابوے کے خلاف سیریز میں نوجوان کرکٹرز نے عمدہ کارکردگی کا مظاہرہ کیا جن میں بابراعظم قابل ذکر ہیں۔

انھوں نے کہا کہ ون ڈے ٹیم کے نقطہ نظر سے خوش آئند بات یہ ہے کہ اس کے کپتان اظہرعلی عمدہ بیٹنگ کا مظاہرہ کررہے ہیں۔

وقاریونس نے کہا کہ کوچ پر ہمیشہ دباؤ ہوتا ہے اور اس بار یہ دباؤ اس لیے زیادہ رہا ہے کہ پاکستانی ٹیم لگاتار پانچ ون ڈے سیریز ہاری ہے۔ تاہم انھیں امید ہے کہ سری لنکا میں پاکستانی ٹیم اچھی کارکردگی کا مظاہرہ کرے گی۔

وقاریونس نے کہا کہ زمبابوے کے خلاف سیریز جیتنے سے کھلاڑیوں کو اعتماد ملا ہے۔

وقاریونس نے واضح کردیا کہ زمبابوے کے خلاف سیریز کے بعد ان کا اپنے گھر آسٹریلیا جانا پاکستان کرکٹ بورڈ سے ان کے معاہدے میں شامل ہے اور ہر کسی کواپنے گھر جانے کا حق حاصل ہے۔

اسی بارے میں