محمد حفیظ ایک سال تک بولنگ نہیں کر سکیں گے

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption محمد حفیظ چنئی کی لیبارٹری میں ہونے والا بائیومکینک ٹیسٹ کلیئر کرنے میں کامیاب نہیں ہوسکے ہیں

پاکستانی کرکٹ ٹیم کے آف سپنر محمد حفیظ ایک سال تک بین الاقوامی کرکٹ میں بولنگ نہیں کرسکیں گے۔

وہ چھ جولائی کو بھارت کے شہر چنئی کی لیبارٹری میں ہونے والا بائیومکینک ٹیسٹ کلیئر کرنے میں کامیاب نہیں ہو سکے ہیں۔

واضح رہے کہ پاکستان اور سری لنکا کے درمیان گال میں کھیلے گئے پہلے ٹیسٹ میں امپائرز نے ان کے بولنگ ایکشن کے بارے میں رپورٹ دی تھی جس کے بعد وہ اپنے بولنگ ایکشن کے بائیو مکینک تجزیے کے لیے چنئی گئے تھے تاہم رپورٹ کے آنے تک سری لنکا کے خلاف دونوں ون ڈے میچوں میں انھوں نےبولنگ کی تھی۔

پہلے ایک روزہ میچ میں انھوں نے سنچری بنانے کے علاوہ چار وکٹیں حاصل کر کے پاکستان کی جیت میں اہم کردار ادا کیا تھاجبکہ دوسرے ایک روزہ میچ میں بھی انھوں نے دو کھلاڑیوں کو آؤٹ کیا تھا۔

محمد حفیظ اب تک 44 ٹیسٹ میچوں میں 33.90 اوسط سے 52 وکٹیں لینے کے ساتھ ساتھ 163 ایک روزہ میچوں میں 34.87 کی اوسط سے 129 کھلاڑیوں کو آؤٹ کر چکے ہیں جبکہ 62 ٹی ٹوئنٹی میچوں میں ان کی حاصل کردہ وکٹوں کی تعداد 46 ہے۔

آئی سی سی کے قوانین کے تحت اگر کسی بولر کا بولنگ ایکشن دو سال کے عرصے میں دو بار رپورٹ ہوتا ہے تو پھر اسے بین الاقوامی کرکٹ میں ایک سالہ پابندی کا سامنا کرنا پڑتا ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption پہلے ایک روزہ میچ میں انھوں نے سنچری بنانے کے علاوہ چار وکٹیں حاصل کر کے پاکستان کی جیت میں اہم کردار ادا کیا تھا

34 سالہ آف سپنر محمد حفیظ کے بولنگ ایکشن گزشتہ برس نومبر میں نیوزی لینڈ کے خلاف ٹیسٹ میچ کے دوران رپورٹ ہوا تھا جس نے پاکستان ٹیم کی عالمی کپ کی تیاریوں کو بری طرح متاثر کیا تھا۔

محمد حفیظ نے دسمبر میں لفبرا یونیورسٹی سے بھی اپنے بولنگ ایکشن کا بائیو میکنک تجزیہ کروایا تھا جس کے بعد ان کے بولنگ ایکشن کو غیر قانونی قرار دے دیا گیا تھا۔

تاہم اپریل 2015 میں بائیومکینک تجزیے کی رپورٹ میں وہ کلیئر ہوگئے تھے۔

واضح رہے کہ حفیظ سے قبل پاکستان کے ہی سعید اجمل کے بولنگ ایکشن کو بھی غیر قانونی قرار دے کر انھیں بولنگ کروانے سے روک دیا گیا تھا۔

تاہم رواں سال کے آغاز میں ہی سعید اجمل کو ان کے ایکشن کے کامیاب تجزیے کے بعد بولنگ کروانے کی اجازت مل گئی تھی۔

اسی بارے میں