جان بوجھ کر فیلڈنگ میں خلل نہیں ڈالا: سٹوکس

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption سٹوکس ون ڈے کرکٹ میں اس طرح آؤٹ ہونے والے چھٹے کھلاڑی ہیں

لارڈز میں سنیچر کو آسٹریلیا کے خلاف دوسرے ون ڈے میچ میں جان بوجھ کر فیلڈنگ میں خلل ڈالنے یعنی’اوبسٹرکٹنگ دا فیلڈ‘ کی بنیاد پر آؤٹ دیے جانے والے انگلینڈ کے بلے باز بین سٹوکس کا کہنا ہے کہ انھوں نے ایسا ارادی طور پر نہیں کیا تھا۔

24 سالہ سٹوکس کو اس وقت آؤٹ قرار دیا گیا تھا جب مچل سٹارک کی وکٹوں کی جانب کی گئی تھرو سٹوکس کو جا لگی تھی۔

آسٹریلیا کے کپتان سٹیو سمتھ کا کہنا ہے کہ سٹوکس واضح طور پر آؤٹ تھے۔

لیکن سٹوکس کا کہنا ہے کہ ’میں نہیں سمجھتا کہ ایسی صورتِ حال میں کسی بھی شخص کے پاس سوچنے کا اتنا وقت ہو گا کہ وہ جان بوجھ کر گیند کے سامنے آ جائے۔‘

واضح رہے کہ آسٹریلیا کو انگلستان پر پانچ ایک روزہ میچوں کی سیریز میں دو صفر کی برتری حاصل ہے۔

سٹوکس ایک روزہ کرکٹ میں اس طرح آؤٹ ہونے والے چھٹے کھلاڑی ہیں، جبکہ ٹیسٹ میچوں میں صرف لین ہٹن کو اس طرح آؤٹ دیا گیا ہے۔

پاکستان کے چار کھلاڑی رمیز راجہ، انضمام الحق، محمد حفیظ اور انور علی اس طرح آؤٹ ہو چکے ہیں جبکہ بھارت کے مہندر امرناتھ دو مرتبہ اور جنوبی افریقہ کے کلینن بھی فیلڈنگ میں خلل ڈالنے کے ارتکاب میں آؤٹ قرار دیے جا چکے ہیں۔

اس بارے میں بی بی سی سے بات کرتے ہوئے سٹوکس کا کہنا تھا کہ وہ امید کرتے ہیں کہ اس واقعے کی وجہ سے دونوں ٹیموں کے تعلقات خراب نہیں ہوں گے۔

’میں امید کرتا ہوں کہ جب اگلا میچ ہو گا تو اس واقعے کو زیادہ بڑھا کر پیش نہیں کیا جائے گا اور لوگوں کی توجہ اصل کرکٹ کی طرف رہے گی۔‘

اسی بارے میں