آئی سی سی نے بلال آصف کے بولنگ ایکشن پر اعتراض کر دیا

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption بلال آصف کو محمد حفیظ پر ایک سالہ پابندی کے بعد ان کے متبادل کے طور پر دیکھا جا رہا تھا

پاکستانی کرکٹ ٹیم کے آف سپنر بلال آصف کے بولنگ ایکشن کو مشکوک قرار دے دیا گیا ہے ۔

پاکستانی ٹیم کے منیجر انتخاب عالم نے اس بات کی تصدیق کی ہے کہ پاکستان اور زمبابوے کے درمیان ہرارے میں کھیلے گئے تیسرے اور آخری ون ڈے کے امپائروں نے بلال آصف کے بولنگ ایکشن کے قواعد و ضوابط کے خلاف ہونے کے بارے میں انھیں مطلع کر دیا ہے۔

محمد حفیظ ایک سال تک بولنگ نہیں کر سکیں گے

’محمد عامر کو ایک اور موقع دیا جائے‘

یاد رہے کہ تیسرے ون ڈے میں اپنا دوسرا ہی ون ڈے کھیلنے والے بلال آصف نے صرف 25 رنز دے کر پانچ وکٹیں حاصل کی تھیں اور پاکستان کی سات وکٹوں کی جیت میں اہم کردار ادا کیا تھا۔

بلال آصف کو اب آئی سی سی کے قواعد و ضوابط کے مطابق بولنگ ایکشن درست کرنے کے لیے آئی سی سی کے بائیومکینک تجزیے کے عمل سے گزرنا ہوگا جس کے لیے ان کے پاس دو ہفتے کا وقت ہو گا۔ البتہ تجزیے کی رپورٹ آنے تک وہ بولنگ کرتے رہیں گے۔

قابل ذکر بات یہ ہے کہ بلال آصف زمبابوے کے دورے میں صرف ٹی 20 کا حصہ تھے لیکن انھیں ون ڈے سیریز میں بھی شامل کیا گیا تھا جس کا مقصد ان کی بولنگ کو دیکھنا تھا کہ اگر وہ موثر ثابت ہوتے ہیں تو انھیں سولھویں کھلاڑی کے طور پر انگلینڈ کے خلاف متحدہ عرب امارات میں ہونے والی ٹیسٹ سیریز کے لیے پاکستانی ٹیم میں شامل کر لیا جائے۔

تاہم اب سولھویں کھلاڑی کے طور پر شعیب ملک کو ٹیم میں شامل کیا گیا ہے۔

بلال آصف کے بولنگ ایکشن کا مشکوک قرار دیا جانا پاکستانی ٹیم کے لیے بڑا دھچکہ ہے جو پہلے ہی سعید اجمل اور محمد حفیظ کی بولنگ کی خدمات سے محروم ہو چکی ہے۔

بلال آصف کو محمد حفیظ پر ایک سالہ پابندی کے بعد ان کے متبادل کے طور پر دیکھا جا رہا تھا۔

اسی بارے میں