کُک کی سنچری، انگلش بلے بازوں کی پراعتماد بیٹنگ

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption الیسٹر کک نے ٹیسٹ کرکٹ میں اپنی 28ویں سنچری مکمل کی ہے

ابوظہبی میں کھیلے جانے والے پہلے کرکٹ ٹیسٹ میچ میں پاکستان کے 523 رنز کے جواب میں انگلش بلے بازوں نے بھی پہلی اننگز میں عمدہ بلے بازی کی ہے۔

تیسرے دن کھیل کے اختتام پر انگلینڈ نے تین وکٹوں کے نقصان پر 290 رنز بنا لیے تھے اور اسے پاکستان کی پہلی اننگز کی برتری ختم کرنے کے لیے ابھی مزید 233 رنز درکار ہیں۔

میچ کا تفصیلی سکور کارڈ

تیسرے دن کے کھیل کی تصاویر

پاکستان انگلینڈ کرکٹ سیریز پر خصوصی ضمیمہ

انگلش ٹیم کے کپتان الیسٹر کک نے سنچری بنائی ہے اور جب کھیل ختم ہوا تو کریز پر ان کا ساتھ جو روٹ دے رہے تھے۔

جمعرات کو کک نے معین علی کے ساتھ مل کر بغیر کسی نقصان کے 56 رنز کے سکور سے انگلینڈ کی پہلی اننگز دوبارہ شروع کی اور سکور 116 تک پہنچا دیا۔

تاہم اس موقع پر عمران خان نے معین علی کو 35 رنز پر آؤٹ کر کے پاکستان کو پہلی کامیابی دلوائی۔

اس نقصان کے بعد انگلش کپتان نے ایئن بیل کے ساتھ مل کر سکور آگے بڑھانا شروع کیا اور ٹیسٹ کرکٹ میں اپنی 28ویں سنچری مکمل کی۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption عمران خان نے پاکستان کو پہلی کامیابی دلوائی

ان دونوں کے درمیان دوسری وکٹ کے لیے 165 رنز کی شراکت ہوئی اور اس دوران ایئن بیل نے نصف سنچری بھی بنائی۔

پاکستان کو دن کی دوسری کامیابی وہاب ریاض نے بیل کو حفیظ کے ہاتھوں کیچ کر کے دلوائی۔ وہاب نے ہی نائٹ واچ مین مارک وڈ کو بھی پویلین بھیجا۔

اس میچ میں انگلینڈ کی طرح پاکستانی فیلڈنگ بھی غیر معیاری رہی ہے اور شان مسعود نے ایئن بیل کا کیچ چھوڑ کر پاکستان کے لیے دوسری وکٹ حاصل کرنے کا موقع گنوایا۔

خیال رہے کہ پاکستان نے اس میچ میں ٹاس جیت کر پہلے کھیلنے کا فیصلہ کیا تھا اور شعیب ملک کی ڈبل سنچری اور اسد شفیق کی سنچری کی بدولت پہلی اننگز آٹھ وکٹوں پر 523 رنز بنا کر ڈیکلیئر کر دی تھی۔

ٹیسٹ ٹیم میں پانچ برس بعد واپس آنے والے شعیب ملک کے کریئر کی یہ پہلی ڈبل سنچری تھی اور وہ 245 رنز کی اننگز کھیل کر بین سٹوکس کی گیند پر کیچ ہوئے۔

شعیب ملک اس میدان پر پاکستان کے لیے ڈبل سنچری بنانے والے تیسرے بلے باز ہیں۔ اس سے قبل توفیق عمر اور یونس خان یہ کارنامہ سرانجام دے چکے ہیں۔

اسی بارے میں