مشکوک ایکشن کے تجزیے کے بعد بلال آصف ٹیم میں شامل

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption بلال آصف کا ایکشن زمبابوے کے خلاف تیسرے ون ڈے میچ میں رپورٹ ہوا تھا

پاکستانی آف سپنر بلال آصف بولنگ ایکشن کو بایومکینک ٹیسٹ کے بعد دبئی طلب کر لیا گیا ہے جہاں وہ پہلے سے موجود پاکستانی سکواڈ کا حصہ بنیں گے۔

ان کے بولنگ ایکشن کا بایو مکینک تجزیہ پیر کے روز چنئی کی لیبارٹری میں ہونا ہے اور اس تجزیے کی رپورٹ آنے تک وہ انٹرنیشنل کرکٹ کھیل سکتے ہیں۔

اب بلال آصف کا مستقبل کیا ہے؟

آئی سی سی نے بلال آصف کے بولنگ ایکشن پر اعتراض کر دیا

بلال کے بولنگ ایکشن کے قواعد وضوابط کے برخلاف ہونے کے بارے میں پاکستان اور زمبابوے کے درمیان ہرارے میں کھیلے گئے تیسرے ون ڈے کے امپائرز نے رپورٹ دی تھی۔

اس میچ میں بلال آصف نے پانچ وکٹیں حاصل کی تھیں اور مین آف دی میچ رہے تھے۔

پاکستانی ٹیم منیجمنٹ کا خیال ہے کہ چونکہ انگلینڈ کی ٹیم میں بائیں ہاتھ سے کھیلنے والے متعدد بیٹسمین موجود ہیں لہذا پاکستانی ٹیم میں آف سپنر کی موجودگی ضروری ہے۔

پاکستانی ٹیم منیجمنٹ نے پہلے ٹیسٹ میں یاسر شاہ کے ان فٹ ہونے کے بعد لیفٹ آرم اسپنر ظفرگوہر کو طلب کیا تھا لیکن وہ بروقت ابوظہبی نہیں پہنچ سکے تھے۔

اس پر کپتان مصباح الحق نے سخت تنقید کرتے ہوئے کہا تھا کہ بیک اپ میں کسی سپنر کا نہ ہونا بدانتظامی تھی۔

مصباح الحق نے ابوظہبی کی وکٹ پر بھی ناراضی ظاہر کرتے ہوئے کہا تھا کہ یہ بات کسی بچے کو بھی پتہ ہوگی کہ جب آپ انگلینڈ کے خلاف کھیل رہے ہیں توآپ کو ٹرننگ وکٹ کی ضرورت ہوتی ہے۔

پاکستان اور انگلینڈ کے درمیان دوسرا ٹیسٹ میچ 22 اکتوبر سے دبئی میں کھیلا جائے گا۔

اسی بارے میں