مصباح الحق کی شاندار سنچری، پاکستان کے 282 رن

Image caption مصباح الحق نے ایک بار پھر ذمہ دارانہ انداز میں بلے بازی کی ہے

متحدہ عرب امارات میں انگلینڈ کے خلاف دوسرے کرکٹ ٹیسٹ میچ کے پہلے دن پاکستانی بلے بازوں نے سست روی سے مگر پراعتماد انداز میں بلے بازی کی ہے۔

جمعرات کو کھیل کے اختتام پر پاکستان نے چار وکٹوں کے نقصان پر 282 رن بنا لیے تھے۔

میچ کا تفصیلی سکور کارڈ

پاکستان بمقابلہ انگلینڈ 2015: خصوصی ضمیمہ

انگلشن بیٹسمینوں کی کمزوری سے فائدہ اٹھاؤں گا: یاسر شاہ

دبئی انٹرنیشنل سٹیڈیم میں جب کھیل ختم ہوا تو کریز پر کپتان مصباح الحق ٹیسٹ کرکٹ میں اپنی نویں سنچری مکمل کرنے کے بعد موجود تھے۔

آخری سیشن میں سست روی سے بلے بازی کے بعد مصباح نے دن کے آخری اوور میں دو چھکے لگا کر سنچری بنائی۔

کریز پر ان کا ساتھ اسد شفیق دے رہے ہیں جنھیں جمعے کو ون ڈے کریئر کی دسویں نصف سنچری بنانے کے لیے مزید چار رن درکار ہوں گے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption یونس خان نے عمدہ بیٹنگ کرتے ہوئے نصف سنچری تو بنائی لیکن ایک غیر ضروری شاٹ کھیل کر آؤٹ ہوئے

ان دونوں بلے بازوں کے درمیان پانچویں وکٹ کے لیے 104 رن کی شراکت ہو چکی ہے۔

اس میچ میں پاکستان نے ٹاس جیت کر پہلے بیٹنگ کا فیصلہ کیا تھا۔

پاکستان کے آؤٹ ہونے والے آخری بلے باز یونس خان تھے جنھوں نے عمدہ بیٹنگ کرتے ہوئے نصف سنچری تو بنائی لیکن ایک غیر ضروری شاٹ کھیل کر وڈ کو وکٹ دے بیٹھے۔

یونس کے علاوہ پہلے ٹیسٹ میں ناکام رہنے والے اوپنر شان مسعود بھی نصف سنچری بنانے میں کامیاب رہے اور 54 رنز بنا کر پویلین لوٹے۔

ابوظہبی ٹیسٹ کی پہلی اننگز میں ڈبل سنچری بنانے والے شعیب ملک پہلے ٹیسٹ کی دوسری اننگز کے بعد اس میچ میں بھی ناکام رہے اور صرف دو رن بنا کر کیچ آؤٹ ہوئے۔ ان کی وکٹ سٹوکس نے حاصل کی۔

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption پہلے ٹیسٹ میں ناکام رہنے والے شان مسعود 54 رنز بنا کر کیچ آؤٹ ہوئے

ان کے علاوہ محمد حفیظ کی وکٹ معین علی نے لی جنھوں نے 19 رنز بنائے۔

پاکستان کے نقطۂ نظر سے اہم بات یہ ہے کہ لیگ سپنر یاسر شاہ فٹ ہونے کے بعد یہ ٹیسٹ میچ کھیل رہے ہیں۔ ان کی ٹیم میں واپسی راحت علی کی جگہ ہوئی ہے۔

پاکستانی ٹیم کو ایک بار پھر قابل اعتماد بیٹسمین اظہرعلی کی خدمات حاصل نہیں جو اپنی ساس کے انتقال کی وجہ سے وطن واپس چلے گئے ہیں۔

دونوں ملکوں کے درمیان تین ٹیسٹ میچوں کی سیریز کا پہلا ٹیسٹ ابوظہبی میں ڈرا ہوگیا تھا۔

پاکستان نے دبئی میں کھیلے گئے آٹھ ٹیسٹ میچوں میں چار جیتے ہیں اور ان چار فتوحات میں دو انگلینڈ کے خلاف ہیں۔

بقیہ چار میچوں میں سے دو میں اسے شکست ہوئی ہے اور دو بے نتیجہ رہے تھے۔

اسی بارے میں