سپنرز نے پاکستان کو عالمی نمبر دو بنوا دیا

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption یاسر شاہ نے سیریز میں سب سے زیادہ وکٹیں حاصل کیں

پاکستانی سپنرز نے شارجہ ٹیسٹ میں انگلینڈ کے خلاف 127 رنز کی جیت پر مہر تصدیق ثبت کردی۔ مہمان ٹیم 284 رنز کے ہدف کے تعاقب میں صرف 156 رنز بناکر آؤٹ ہوگئی۔

کپتان ایلسٹر کک کی مزاحمت بھی ٹیم کے کام نہ آئی جنھوں نے 63 رنز سکور کیے۔

شارجہ ٹیسٹ اور سیریز پاکستان کے نام

شارجہ ٹیسٹ کا فیصلہ کن دن

اس کے ساتھ ہی پاکستان نے تین ٹیسٹ میچوں کی سیریز دو صفر سے جیت کر آئی سی سی کی عالمی ٹیسٹ رینکنگ میں دوسری پوزیشن حاصل کرلی۔

آخری بار پاکستانی ٹیم نے عالمی رینکنگ میں دوسری پوزیشن اگست سنہ 2006 میں حاصل کی تھی۔

دو صفر سے سیریز ہارنے کے نتیجے میں انگلینڈ کی ٹیم عالمی رینکنگ میں تیسرے سے چھٹے نمبر پر آ گئی ہے۔

ابوظہبی میں سیریز کا پہلا ٹیسٹ دلچسپ مقابلے کے بعد ڈرا ہوگیا تھا۔ جب کم روشنی کے سبب میچ ختم کیاگیا تھا تو انگلینڈ کو جیت کے لیے آٹھ اوورز میں صرف 25 رنز درکار تھے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption الیسٹر کک تھی نے اپنے سامنے چار بیٹسمینوں کو صرف 31 گیندوں پر پویلین واپس جاتے دیکھا

دبئی میں کھیلا گیا دوسرا ٹیسٹ پاکستان نے178 رنز سے جیتا تھا۔

شارجہ ٹیسٹ کے آخری دن انگلینڈ کی تمام تر امیدیں کپتان الیسٹر کک اور جو روٹ سے وابستہ تھیں لیکن پاکستانی سپنرز نے پہلے ہی سیشن میں پانچ وکٹیں حاصل کر کے بازی پلٹ دی۔

جو روٹ دن کے دوسرے ہی اوور میں اپنے گذشتہ روز کے سکور چھ میں اضافہ کیے بغیر یاسر شاہ کی گیند پر ایل بی ڈبلیو ہوگئے۔

پہلی اننگز میں عمدہ بیٹنگ کرنے والے جیمز ٹیلر اس بار صرف دو رنز بناکر ذوالفقار بابر کی گیند پر یونس خان کے ہاتھوں سلپ میں کیچ ہوگئے۔

یہ ذوالفقار بابر کی 13ویں ٹیسٹ میں 50 ویں وکٹ تھی۔

جانی بیرسٹو کو کھاتہ کھولنے کا موقع نہ مل سکا اور انھیں یاسر شاہ نے ایل بی ڈبلیو کیا۔

سمیت پٹیل ایک ہی گیند کے مہمان ثابت ہوئے اور ذوالفقار بابر کی گیند پر ایل بی ڈبلیو ہوگئے۔

کپتان الیسٹر کک کے لیے یہ صورتحال انتہائی تکلیف دہ تھی جنھوں نے اپنے سامنے چار بیٹسمینوں کو صرف 31 گیندوں پر پویلین واپس جاتے دیکھا۔

کک اور عادل رشید کی49 رنز کی شراکت توڑنے کرنے کے لیے پاکستانی ٹیم کو 127 گیندوں کا انتظار کرنا پڑا یہ شراکت راحت علی نے عادل رشید کو کلین بولڈ کرکے ختم کی۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption شعیب ملک نے شارجہ ٹیسٹ میں سات وکٹیں حاصل کرکے اہم کردار ادا کیا

سٹوئرٹ براڈ کو 20 رنز پر یاسر شاہ کی گیند پر شعیب ملک نے کیچ کیا۔

کک کی 164 گیندوں پر مشتمل اننگز شعیب ملک کی گیند پر مستعد سرفراز کے ہاتھوں سٹمپڈ کے ذریعے اختتام کو پہنچی۔

سرفراز احمد کے ایک اور سٹمپڈ نے یاسر شاہ کو بین سٹوکس کی فیصلہ کن وکٹ دلاتے ہوئے انگلینڈ کی بساط کھانے کے وقفے کے 40 منٹ بعد لپیٹ دی۔

انگلینڈ کی آٹھ وکٹیں سکور میں صرف 110 رنز کا اضافہ کرسکیں۔

یاسر شاہ نے44 رنز دے کر چار وکٹیں حاصل کیں۔ شعیب مک نے تین اور ذوالفقار بابر نے دو کھلاڑیوں کو آؤٹ کیا۔

پاکستانی سپنرز نے اس ٹیسٹ میں مجموعی طور پر 17 وکٹیں حاصل کیں۔

یاسر شاہ کا اس سیریز میں جادو سر چڑھ کر بولا انھوں نے 15 وکٹیں حاصل کی ہیں۔

اسی بارے میں