میچ ٹائی مگر سپر اوور میں پاکستان ہارگیا

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption کرس ووکس نے تین چھکوں اور ایک چوکے کی مدد سے 37 رنز بنائے

انگلینڈ نے پاکستان کے خلاف تیسرا اور آخری ٹی ٹوئنٹی انٹرنیشنل ٹائی ہونے کے بعد سپر اوور میں جیت لیا۔اس کے ساتھ ہی اس نے ٹی ٹوئنٹی سیریز میں کلین سوئپ بھی کر لیا۔

سپر اوور میں شاہد آفریدی اور عمراکمل، کرس جورڈن کے خلاف صرف 3 رنز بنانے میں کامیاب ہوسکے۔

انگلینڈ نے پاکستان کو سپر اوور میں شکست دے دی

کپتان اوئن مورگن اور جوز بٹلر نے شاہد آفریدی کے اوور میں چار رنز بناکر انگلینڈ کو کامیابی دلا دی۔

اس سے قبل ٹاس جیت کر انگلینڈ نے پہلے بیٹنگ کرتے ہوئے آٹھ وکٹوں پر 154 رنز بنائے تھے۔

پاکستانی ٹیم جواب میں سات وکٹوں پر 154 رنز بنا سکی۔

شعیب ملک نے شاندار بیٹنگ کرتے ہوئے ناقابل شکست 75 رنز بنائے لیکن آخری اوور کی پانچویں گیند پر آؤٹ ہونے کے بعد سہیل تنویر آخری گیند پر جیت کے لیے درکار 2 رنز بنانے میں کامیاب نہ ہوسکے۔

دبئی میں دونوں ٹی ٹوئنٹی ہارنے کے بعد پاکستانی ٹیم کو اس میچ میں جس جارحانہ کرکٹ کی ضرورت تھی وہ انگلینڈ کی اننگز کے ابتدائی چند اوورز میں ہی دکھائی دی۔

ٹاس جیت کر انگلینڈ کا آغاز ڈرامائی تھا۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption شاہد آفریدی کے پاس سپن بولنگ کے آپشنز بہت ہی محدود تھے

اپنا پہلا ٹی ٹوئنٹی انٹرنیشنل کھیلنے والے عامر یامین نے میچ کی پہلی ہی گیند پر جیسن روئے کو آؤٹ کردیا جس کے بعد شاہد آفریدی نے اپنے پہلے ہی اوور میں جو روٹ اور معین علی کی وکٹیں لگاتار گیندوں پر حاصل کرڈالیں۔

اس کے بعد جب شعیب ملک نے بھی اپنے پہلے ہی اوور کی پہلی گیند پر کپتان اوئن مورگن کی وکٹ حاصل کی تو انگلینڈ کی ٹیم 68 کے سکور پر چار وکٹوں سے محروم ہونے کے بعد شدید مشکلات سے دوچار تھی لیکن پاکستانی تیز بولرز رنز روکنے میں بری طرح ناکام رہے۔

طویل قامت عرفان نے چار اوورز میں 40 رنز دے ڈالے۔

سہیل تنویر پہلے دو اوورز میں 21 رنز دینے کے ساتھ ساتھ جیمز ونس کا دو رنز پر اپنی ہی گیند پر کیچ ڈراپ کرنے کے بھی خطاوار تھے جنھوں نے اس موقع کا فائدہ اٹھاتے ہوئے 45 رنز بنا ڈالے۔

ونس اور کرس ووکس اننگز کے آخری اوور میں سہیل تنویر کی بولنگ پر آؤٹ ہوئے لیکن ساتویں وکٹ کی شراکت میں 60 رنز بناکر انگلینڈ کی پوزیشن بہتر بناگئے۔

کرس ووکس نے تین چھکوں اور ایک چوکے کی مدد سے 37 رنز بنائے۔

سہیل تنویر نے اننگز کا اختتام چار اوورز میں 36 رنز پر کیا۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption اپنا پہلا ٹی ٹوئنٹی انٹرنیشنل کھیلنے والے عامر یامین نے میچ کی پہلی ہی گیند پر جیسن روئے کو آؤٹ کردیا

انور علی جنھوں نے گذشتہ دونوں میچوں میں اچھی بولنگ کی تھی اس بار چار اوورز میں 35 رنز دے ڈالے جبکہ عرفان کی گیند پر کرس ووکس کا ڈراپ کیچ بھی ان کے کھاتے میں لکھا گیا۔

شاہد آفریدی کے پاس سپن بولنگ کے آپشنز بہت ہی محدود تھے انھوں نے خود ایک بار پھر موثر بولنگ کی لیکن حیرت انگیز طور پر انھوں نے شعیب ملک سے دو اوورز کے بعد بولنگ نہیں کرائی۔

پاکستانی اننگز مایوس کن انداز میں شروع ہوئی۔ پہلے ہی اوور میں احمد شہزاد اور محمد حفیظ کی وکٹیں پاکستانی ڈریسنگ روم میں بجلی بن کر گریں۔

احمد شہزاد ڈیوڈ ولی کی گیند پر بولڈ ہوئے اور اگلی ہی گیند پر رن آؤٹ ہونے یا کرانے کے لیے مشہور محمد حفیظ اس بار خود رن آؤٹ ہوگئے اور جب تیسرے اوور میں ڈیوڈ ولی نے صفر پر رفعت اللہ مہمند کو ایل بی ڈبلیو کیا تو پاکستانی ٹیم کا سکور صرف 11 رنز تھا جو 50 رنز تک پہنچتے ہوئے محمد رضوان کی وکٹ لے گیا۔

عمراکمل نے ایک بار پھر جلد وکٹ گنوا کر کسی کو حیران نہیں کیا جس کے بعد شعیب ملک اور شاہد آفریدی کی جارحانہ بیٹنگ اور صرف 38 گیندوں پر 63 رنز کی عمدہ شراکت پاکستانی ٹیم کو میچ میں واپس لے آئی۔

شاہد آفریدی تین چھکوں کی مدد سے 29 رنز بناکر آؤٹ ہوئے۔

شعیب ملک جب تک کریز پر رہے جیت کی امید برقرار رہی لیکن ان کے آؤٹ ہونے کے بعد آخری گیند پر پاکستانی ٹیم بائی کا ایک رن ہی حاصل کر پائی۔

اسی بارے میں