’مسئلہ ختم ہوگیا، حفیظ اور اظہر کی کیمپ میں واپسی‘

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption محمد عامر کو ابھی کیمپ میں واپس بلایا ہے

پاکستان کرکٹ بورڈ کے چیئرمین شہریار خان نے کہا ہے کہ محمد عامر کے معاملے پر موجود تنازع ختم ہوگیا ہے اور محمد حفیظ اور اظہر علی تربیتی کیمپ میں واپس آگئے ہیں۔

ان کا کہنا تھا محمد عامر کو صرف کیمپ میں واپس بلایا ہے ابھی انھیں ٹیم میں شامل نہیں کیا گیا۔

خیال رہے کہ محمد حفیظ اور ون ڈے میں پاکستانی ٹیم کے کپتان اظہر علی نے سپاٹ فکسنگ میں ملوث سزا یافتہ فاسٹ بولر محمد عامر پر اعتراض کرتے ہوئے لاہور میں جاری قومی فٹنس کیمپ میں شمولیت سے انکار کررکھا تھا۔

’ہفتے تک فیصلہ کر لیں‘

عامر کی موجودگی پر اظہر اور حفیظ کا بائیکاٹ

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption ون ڈے کپتان اظہر علی اور محمد حفیظ نے یہ موقف اختیار کیا تھا کہ وہ کسی بھی صورت میں ملک کی بدنامی کا سبب بننے والے کرکٹرز کے ساتھ کرکٹ نہیں کھیل سکتے

سنیچر کی صبح لاہور میں محمد حفیظ سے ملاقات کے بعد چیئرمین پی سی بی کا کہنا تھا کہ اظہر علی اور حفیظ کو اپنا موقف پیش کرنے کا پورا موقع دیا گیا ہے اور اب وہ ٹیم میں واپس آگئے ہیں۔

انھوں نے بتایا کہ دونوں کھلاڑیوں سے ’اچھی ملاقات ہوئی میں نے بہت پیار اور محبت سے سمجھایا، دونوں نے کہا کہ ہم آپ کے ساتھ ہیں۔‘

شہریار خان کا کہنا تھا کہ انھوں نے محمد حفیظ اور اظہر علی کو بتایا ہے کہ ابھی عامر کو کیمپ میں بلایا گیا ہے اگر ان کی ٹیم میں سلیکشن ہوجاتی ہے تو انھیں ساتھ لے کر چلنا ہوگا، کوئی بھی ٹیم میں انھیں مشکوک نظر سے نہ دیکھے اور یہ کھلاڑیوں کی ذمہ داری بنتی ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ تین سے چار روز میں قومی کرکٹ ٹیم کا اعلان ہو جائےگا۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption اپنے موقف پر قائم ہیں اور ان کا یہ موقف کسی ایک شخص کے خلاف نہیں

اس سے قبل پی سی بی حکام سے ملاقات کرنے کے بعد محمد حفیظ نے میڈیا سے مختصر گفتگو میں کہا کہ ان کے موقف کو غلط انداز میں پیش کیا گیا ہے۔

سرکاری ٹی وی کے مطابق محمد حفیظ کا یہ بھی کہنا تھا کہ وہ اپنے موقف پر قائم ہیں اور ان کا یہ موقف کسی ایک شخص کے خلاف نہیں۔

محمد حفیظ کا کہنا تھا ’کسی کو بتانے کی ضرورت نہیں کہ مجھ میں کتنا ٹیلنٹ ہے۔ میں جانتا ہوں کہ میں ایک اوسط درجے کا کھلاڑی ہوں۔‘

ان کا کہنا تھا کہ ملک کو بدنام کرنے والوں کو نہیں کھیلنا چاہیے۔

اسی بارے میں