سپاٹ فکسنگ پر بھارتی کرکٹر اجیت چنڈیلا پر تاحیات پابندی

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption اجیت چنڈیلا اور ان کے ساتھی کھلاڑیوں سری سانت اور انکت چوہان نے نے سٹے بازوں کے ساتھ مل کر آئی پی ایل کے تین میچ فکس کیے تھے

بھارتی کرکٹ بورڈ نے انڈین پریمیئر لیگ میں سپاٹ فکسنگ کے قصوروار کھلاڑی اجیت چنڈیلا پر عمر بھر کے لیے کرکٹ کھیلنے پر پابندی عائد کر دی ہے۔

تاحیات پابندی لگانے کا فیصلہ پیر کو ممبئی میں بی سی سی آئی کی انضباطی کمیٹی کے اجلاس میں کیا گیا۔

سپاٹ فکسنگ:سری سانت، انکت پر تاحیات پابندی

بی سی سی آئی کی جانب سے جاری کردہ بیان کے مطابق اجیت چنڈیلا پر بورڈ کے اینٹی کرپشن کوڈ کی سات دفعات کی خلاف ورزی کا الزام ثابت ہوا ہے۔

بھارتی بورڈ کا کہنا ہے کہ چنڈیلا کے کرکٹ میچوں یا کھیل سے وابستہ کسی سرگرمی میں شرکت اور بورڈ کے معاملات سے کسی بھی قسم کا تعلق رکھنے پر تاحیات پابندی ہو گی۔

2013 میں سپاٹ فکسنگ کے الزامات اور اجیت چنڈیلا سمیت دو دیگر کھلاڑیوں کی گرفتاری سے آئی پی ایل کا چھٹا ایڈیشن تنازعات کا شکار ہوگیا تھا۔

دہلی پولیس نے 16 مئی 2013 کو راجستھان رائلز کے ایس سری سانت، اجیت چنڈيلا اور انکت چوہان اور 16 سٹے بازوں کو میچ فکسنگ کے الزام میں گرفتار کیا تھا۔

دہلی پولیس کے مطابق ان تین كھلاڑیوں نے سٹے بازوں کے ساتھ مل کر پونے واریئرز، کنگز الیون پنجاب اور ممبئی انڈینز کے خلاف کھیلے گئے میچ فکس کیے تھے۔

بعدازاں بھارتی کرکٹ کنٹرول بورڈ نے ستمبر 2013 میں سری سانت اور انکت چوہان پر تاحیات پابندی عائد کر دی تھی جبکہ چنڈیلا پر اب یہ پابندی لگانے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔

بی سی سی آئی نے چنڈیلا کے علاوہ ایک اور مقامی کھلاڑی ہکن شاہ ہر بھی انٹی کرپشن کوڈ کی خلاف ورزی پر پانچ سال کی پابندی لگائی ہے۔

اس کے علاوہ بیان میں یہ بھی بتایا گیا ہے کہ بورڈ کی انضباطی کمیٹی نے فکسنگ کے معاملے میں پاکستانی امپائر اسد رؤف کا وہ جواب مسترد کر دیا ہے جس میں انھوں نے کہا تھا کہ اس معاملے کی تحقیقات شفاف طریقے سے نہیں ہوئیں اور اس لیے ایک نیا تحقیقاتی افسر مقرر کیا جائے۔

بی سی سی آئی کے مطابق کمیٹی نے اسد رؤف کو تحریری جواب داخل کروانے کے لیے نو فروری تک کی حتمی مہلت دی ہے۔

اسی بارے میں