’بھارت کو جہاں ہم کہیں گے ہوم سیریز کھیلنی ہوگی‘

نجم سیٹھی تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption اگر ہماری سیریز نہیں ہوتی تو پھر ہم بھی کھیلنے کے لیے بھارت نہیں جائیں گے: نجم سیٹھی

پاکستان کرکٹ بورڈ کی ایگزیکٹیو کمیٹی کے چیئرمین نجم سیٹھی کا کہنا ہے کہ اگر بھارت آئندہ سال پاکستان کے خلاف اپنی ہوم سیریز کھیلنا چاہتا ہے تو پہلے اسے رواں سال پاکستان کے خلاف ہوم سیریز کھیلنی ہوگی۔

بی بی سی سے بات کرتے ہوئے نجم سیٹھی نے کہا کہ معاہدے کے مطابق دونوں ممالک کی کرکٹ ٹیموں کے درمیان کھیلی جانے والی سیریز کے پہلے مرحلے میں بھارت نے پاکستان کے ساتھ ہوم سیریز کھیلنی تھی جو کہ نہ ہو سکی۔

ان کا کہنا تھا کہ ’اب اگر بھارت آئندہ سال اپنی ہوم سیریز کھیلنا چاہتا ہے تو رواں برس اسے پاکستان کی ہوم سیریز کھیلنی ہوگی، جہاں ہم کہیں گے۔‘

نجم سیٹھی کا کہنا تھا کہ ’اگر ہماری سیریز نہیں ہوتی تو پھر ہم بھی کھیلنے کے لیے بھارت نہیں جائیں گے۔‘

انھوں نے رواں برس سیریز کے حوالے سے کہا کہ ’ہم بھارت کے خلاف اپنی ہوم سیریز کے لیے رواں برس ستمبر میں 10 سے 15 دن نکال سکتے ہیں لیکن ہم ان کی طرف سے کچھ نہیں کہہ سکتے۔ ہم انھیں وقت نکالنے کی تجویز ضرور پیش کریں گے لیکن اگر وہ نہیں کھیل سکتے تو پھر آئندہ برس ان کی ہوم سیریز کے لیے جو وقت ہم نے مختص کیا ہوا ہے اس میں انھیں دبئی یا سری لنکا آ کر پہلے ہماری ہوم سیریز کھیلنی ہوگی۔‘

ان کا کہنا تھا کہ گذشتہ دسمبر میں ہونے والی پاکستان بھارت کرکٹ سیریز کے لیے بھی بھارت کی جانب سے اس سیریز کو مختصر کرنے کی تجویز سامنے آئی تھی اور اب ان کے بقول انوراگ ٹھاکر کا یہ بیان سامنے آیا ہے کہ رواں برس بھارت پاکستان کے خلاف کوئی سیریز نہیں کھیل سکتا۔

بھارتی کرکٹ بورڈ سے رابطے کے حوالے سے پوچھے گئے سوال کے جواب پر نجم سیٹھی کا کہنا تھا کہ ’جب تک بھارتی حکومت اجازت نہیں دیتی تب تک ان کے بورڈ سے رابطہ کرنے کا کوئی فائدہ نہیں ہے۔‘

’بی سی سی آئی سے بات کرنے کا کیا فائدہ، پہلے بھی ہم نے آخری وقت تک سب کچھ کیا اور وہ ہمیں یقین دلاتے رہے کہ سیریز ہو جائے گی لیکن اب آئندہ تین یا چار ماہ کے دوران اگر ان کی حکومت اجازت دے دیتی ہے تو پھر رابطہ کیا جا سکتا ہے۔‘

اسی بارے میں