’سیپ بلیٹر کے خلاف اہم معلومات ملی ہیں‘

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption بلیٹر پر الزام ہے کہ انھوں نے غیر قانونی طور پر رقم لے کر ضابطہ اخلاق کی خلاف ورزی کی تھی

سوئٹزر لینڈ کے پراسیکیوٹرز کے مطابق راز افشا کرنے والے ایک شخص کی جانب سے دی گئی معلومات فٹبال کی عالمی تنظیم فیفا کے معطل شدہ صدر سیپ بلیٹر کے خلاف مجرمانہ کیس میں’ مددگار‘ ثابت ہو سکتی ہیں۔

بلیٹر پر’ غیر قانونی طور پر رقم‘ لینے پر فٹبال سے متعلق آٹھ برس کی پابندی عائد ہے۔

بلیٹر اور پلاٹینی پر آٹھ سال کی پابندی

اس کے علاوہ ان کے خلاف سوئس استغاثہ کی جانب سے مجرمانہ انتظامی نااہلی سے متعدد تحقیقات کی جا رہی ہیں۔

سوئس اٹارنی جنرل کے دفتر کے ایک ترجمان نے بی بی سی کو بتایا ہے کہ’دفتر کو ایک عینی شاہد کی جانب سے معلومات ملی ہیں اور یہ بہت مددگار ثابت ہو سکتی ہیں۔

گذشتہ ماہ دسمبر میں ضابطہ اخلاق سے متعلق تحقیقات کے بعد فٹبال کی عالمی تنظیم فیفا کے معطل شدہ صدر سیپ بلیٹر اور یوئیفا کے سربراہ میشل پلاٹینی پر آٹھ سال کی پابندی عائد کی گئی تھی۔

بلیٹر اور پلاٹینی پر الزام ہے کہ انھوں نے غیر قانونی طور پر رقم لے کر ضابطہ اخلاق کی خلاف ورزی کی تھی۔

تاہم دونوں کا یہ دعویٰ ہے کہ یہ رقم سنہ 1998 سے سنہ 2002 کے درمیان کام کے ایک معاہدے میں واجب الادا تھی اور اس وقت پلاٹینی بلیٹر کے تکنیکی معاون کے طور پر کام کرتے تھے۔

یہ بھی سامنے آیا ہے کہ یہ رقم پلاٹینی سے کیے جانے والے تحریری معاہدے کا حصہ نہیں تھی بلکہ بلیٹر اور پلاٹینی کا اصرار ہے کہ یہ زبانی معاہدہ تھا جو کہ سوئس قانون کے تحت جائز ہے۔

اسی بارے میں