بھارتی کرکٹ بورڈ نے پاکستانی امپائر پر پابندی عائد کر دی

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption اسد رؤف نے49 ٹیسٹ میچوں اور 98 ایک روزہ میچوں میں امپائرنگ کے فرائض سرانجام دیے ہیں

بھارتی کرکٹ بورڈ نے 2013 میں انڈین پریمیئر لیگ میں کرپشن کے سکینڈل میں مبینہ طور پر شریک پاکستانی امپائر اسد رؤف پر پانچ برس کی پابندی عائد کر دی ہے۔ بی سی سی آئی کی پابندی کا اطلاق بھارت سے باہر نہیں ہو گا۔

2013 میں آئی پی ایل کے چھٹے ایڈیشن کے دوران بھارتی فاسٹ بولر شری سنت سمیت تین دوسرے کھلاڑیوں پر میچ فکسنگ میں شریک ہونے کی پاداش میں تاحیات پابندی عائد کی جا چکی ہے۔

آئی پی ایل کی ٹیموں چنائی سپرکنگ اور راجھستان رائلز کے اہلکاروں کے جوئے بازی شریک ہونے کی بنا پر انھیں دو سال کے لیے آئی پی ایل سے نکال دیا گیا تھا۔

ممبئی پولیس نے اسد رؤف کو آئی پی ایل سکینڈل میں شریک قرار دیا تھا۔ البتہ اسد رؤف کے وکیل نے کہا ہے کہ ان کے موکل کوئی جرم نہیں کیا ہے۔

بی سی سی آئی نےاسد رؤف کو پانچ برس کےلیے بھارتی کرکٹ کے زیرانتظام کسی بھی کارروائی سے منسلک ہونے سے روک دیا ہے۔

اسد رؤف نے آخری بار 2013 میں انٹرنیشنل کرکٹ میچ میں امپائرنگ کی تھی۔ اسد رؤف نے بھارت کی ڈسپلنری کمیٹی کے سامنے اصالتاً پیش ہونےکی بجائے تحریری بیان بھیجا تھا جس میں انھوں نے اپنے بارے تمام الزامات کو رد کیا تھا۔

بی سی سی آئی کے ڈسپلنری پینل نے قرار دیا ہے کہ اسد راؤف نے میچ فکسنگ کے عوض تحفے اور رقوم وصول کیں۔

59 سالہ اسد رواؤف نے 49 ٹیسٹ میچوں اور 98 ایک روزہ میچوں میں امپائرنگ کے فرائض سرانجام دیے ہیں۔

اسی بارے میں