’ورلڈ ٹی20 میں کھلاڑیوں کے ڈوپ ٹیسٹ کیے جائیں گے‘

تصویر کے کاپی رائٹ unk
Image caption آئی سی سی ورلڈ ٹی 20 میں کل 16 ٹیمیں حصہ لے رہی ہیں

بھارت میں منعقد ہونے والے آئی سی سی ورلڈ ٹی 20 کے منتظمین کا کہنا ہے کہ وہ اس ٹورنامنٹ کے دوران کھلاڑیوں کے اتفاقی ڈوپ ٹیسٹ کریں گے۔

آئی سی سی ورلڈ ٹی20 کے مین ایونٹ میں کل 16 ٹیمیں حصہ لیں گی۔ خواتین اور مردوں کے مقابلے ملا کر کل 58 میچ کھیلے جائیں گے۔

کھلاڑیوں کے ڈوپ ٹیسٹ کرنے کا اعلان ایک ایسے وقت کیا گیا ہے جب رواں ہفتے ہی روس سے تعلق رکھنے والی معروف ٹینس سٹار اور سابقہ عالمی نمبر ایک کھلاڑی ماریا شیراپووا کا ڈوپ ٹیسٹ کا نتیجہ مثبت آیا ہے۔

خبر رساں ادارے اے ایف پی کے مطابق ورلڈ ٹی 20 کے ڈائریکٹر اور بی سی سی آئی کے کرکٹ آپریشنز کے جنرل مینیجر ایم وی سری دھرکا کہنا ہے کہ ’ڈوپ ٹیسٹ پہلے سے ہی کیے جا رہے ہیں اور اس ٹورنامنٹ کے دوران کسی بھی کھلاڑی کا اچانک ڈوپ ٹیسٹ کیا جا سکتا ہے۔‘

انھوں نے کہا کہ ’یہ ٹیسٹ آئی سی سی کی اینٹی ڈوپنگ کمیٹی ورلڈ اینٹی ڈوپنگ ایجنسی کے قوانین کے تحت کرے گی اور اس کا طریقۂ کار یہ ہوگا کہ میچ سے قبل دونوں ٹیموں کے مینیجر اپنی اپنی ٹیموں کے ایک ایک کھلاڑی کا نام دیں گے اور شام تک ان دونوں کے نمونے حاصل کیے جائیں گے۔‘

منتظمین کے بقول اس اقدام کا مقصد کھلاڑیوں کو ٹورنامنٹ کے دوران ممنوعہ ادویات کے استعمال سے دور رکھنا ہے۔

یاد رہے کہ سنہ 2003 میں کھیلے گئے کرکٹ کے عالمی کپ سے قبل آسٹریلیا کے لیگ سپنر شین وارن کا ڈوپ ٹسیٹ مثبت آنے کے بعد ان پر ایک سال کی پابندی عائد کر دی گئی تھی۔

جبکہ 2006 میں آئی سی سی چیمپیئنز ٹرافی سے ایک ہفتہ قبل پاکستانی فاسٹ بولر شعیب اختر اور محمد آصف کے ٹیسٹ کا نتیجہ بھی مثبت آیا تھا۔

اسی بارے میں