’کبھی نہ کبھی ہم بھی ہاریں گے‘

Image caption مہندر سنگھ دھونی کہتے ہیں کہ آئی سی سی کے ایونٹس میں بھارتی ٹیم کی کارکردگی اچھی ہوتی جا رہی ہے

انڈین کپتان مہندر سنگھ دھونی اب اس سوال کے عادی ہوگئے ہیں کہ آخر کیا وجہ ہے بھارتی ٹیم پاکستان کو عالمی مقابلوں میں جیتنے ہی نہیں دیتی؟

وہ ایک عرصے سے یہ سوال سنتے آئے ہیں اور ہر بار ان کا جواب ایک ہی ہوتا ہے کہ کبھی نہ کبھی ہم بھی ہاریں گے۔

پاکستان کو ایڈن گارڈنز میں پہلی بار محدود اووروں کی کرکٹ میں شکست دینے اور عالمی مقابلوں میں پاکستان سے نہ ہارنے کی روایت برقرار رکھنے کے بعد جب دھونی میڈیا کے سامنے آئے تو ایک بار پھر یہی سوال ہوا کہ آخر انڈیا کی ٹیم ایسا کیا کرتی ہے کہ اسے پاکستان کے خلاف شکست نہیں ہوتی؟

دھونی نے بڑے اطمینان سے جواب دیتے ہوئے کہا کہ اگر پاکستان کو ورلڈ کپ اور ورلڈ ٹی 20 میں 11 بار ہرانے پر جہاں ہمیں فخر ہے تو یہ بھی ایک حقیقت ہے کہ ہم کبھی نہ کبھی پاکستان سے ہاریں گے، ایسا نہیں ہو سکتا ہے کہ ہم مسلسل جیتتے ہی رہیں۔

دھونی کا کہنا ہے کہ جیسے پاکستانی ٹیم پر دباؤ ہوتا ہے کہ وہ بھارت سے نہیں جیت رہی، اسی طرح کا دباؤ بھارتی ٹیم پر بھی ہوتا ہے کہ 11 میچ جیت لیے ہیں، 12واں تو جیتنا ہی ہے اور پھر کوئی کہے گا ’ارے نہیں جیتا؟‘

ایڈن گارڈنز کی وکٹ کے بارے میں مہندر سنگھ دھونی نے تسلیم کیا کہ انھوں نے یہ نہیں سوچا تھا کہ یہ وکٹ اتنی زیادہ ٹرن لے گی۔

دھونی وراٹ کوہلی کی غیرمعمولی صلاحیتوں کے معترف ہیں اور کہتے ہیں کہ وراٹ کوہلی کو جو بات دوسروں سےممتاز کرتی ہے وہ ان کی کارکردگی دکھانے کی بھوک ہے، انھیں چیلنج قبول کرنے میں مزا آتا ہے اور ان کی سب سے بڑی خوبی یہ ہے کہ وہ اپنی اننگز کو بڑے سکور میں تبدیل کرنے کی کوشش کرتے ہیں۔

اسی بارے میں