’پاک انڈیا کا میچ ہائی وولٹیج لڑائی ہے‘

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images

’پاکستان اور انڈیا کے درمیان جو کرکٹ میچ ہوتا ہے وہ ایک طرح کی جنگ ہوتی ہے۔ یہ بہت جنون کےساتھ دیکھا جاتا ہے۔ لگتا ہےکہ جنگ ہو رہی ہو۔‘

یہ الفاظ ہیں جھارکھنڈ ریاست کےدھرمیندر کمار سین کے جو بھارت پاک میچ کا ٹکٹ حاصل کرنے کے لیے کئی دنوں سےکولکتہ کے ایڈین گارڈنز اسٹیڈیم کا چکر کاٹ رہے ہیں۔

ٹی ٹوئنٹی عالمی کپ میں پاکستان اور بھارت کے میچ سے ایک روزقبل ہی بھارت کی فضا کافی گرم ہو چکی ہے۔ ایڈن گارڈنز کے باہر دونوں ٹیموں کی ایک جھلک دیکھنے کے لیے ہر وقت سینکڑوں شائقین کا مجمع لگا ہوتا ہے۔ سٹیڈیم میں معمول سےزیادہ سکیورٹی ہے۔

بات جب بھارت پاک میچ کی ہو تو پھر شائقین کےجذبے بھی جنون بن جاتے ہیں۔ کولکتہ کےایک کرکٹ فین پربیر پردھان کہتے ہیں ’پاکستان انڈیا کا میچ ہائی وولٹیج لڑائی ہے۔ یہ دارکٹ ٹکر کی لڑائی ہے۔‘

پورے ملک میں ہر طرف عوام کا یہی رجحان ہے۔ بہار کے محمد فرقان انڈیا ٹیم کے کے بڑے حمایتی ہیں۔ ’میں خدا سے یہی دعا کرتا ہوں کہ انڈیا فتح یاب ہو۔‘

تجزیہ کار کہتے ہیں کہ بھارت پاک میچ کا تناؤ دونوں ملکوں کی سیاست کا بنایا ہوا ہے۔ سپورٹس صحافی جسوندر سدھو کہتے ہیں کہ کرکٹ دونوں ملکوں کی سیاست کی گرفت میں ہے۔ ’یہ جو ٹینشن ہے وہ کرکٹ کھیل کا نہیں ہے۔ یہ لوگوں کی ایک دوسرےکے بارے میں جو سوچ ہے اس کا بحران ہے۔‘

کشیدگی کے سبب بھارت اور پاکستان کےدرمیان کرکٹ میچ اب بہت کم ہو رہے ہیں۔ آئی سی سی کے تحت ہی دونوں ملکوں کےدرمیان میچ ہو پاتا ہے۔ اور جب ہوتا بھی ہے تو نئے نئے تنازع پیدہ ہو جاتے ہیں۔

معروف تجزیہ کار پردیپ میگزین کہتے ہیں کہ تناؤ کا کھلاڑیوں کی کارکردگی پربہت برا اثر پڑ رہا ہے۔ ’بالکل جنگ جیسے حالات بنا دیے جاتے ہیں۔ کھلاڑی بھی ہر وقت دباؤ میں ہوتے ہیں کہ اگر ہار گئے تو مصبیت آ جائے گی۔‘

اسی بارے میں