ریمنڈ مور کے بیان پر سرینا ولیمز برہم

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption مور کا یہ بیان بلی جین کِنگ کی خدمات کی توہین ہے

سرینا ولیمز نے وومن ٹینس کے بارے میں انڈین ویلز کے انتظامی سربراہ ریمنڈ مور کے بیان پر شدید تنقید کی ہے۔

ریمنڈ مور نے اپنے بیان میں کہا تھا کہ ’اگر میں خاتون کھلاڑی ہوتا تو میں ہر رات اپنے گھٹنوں پر جھک کر اِس بات کا شکر ادا کرتی کہ روجر فیڈرر اور رافیل نیدال پیدا ہوئے کیونکہ انھوں نے ہی اس کھیل کو اُس سطح پر پہنچایا ہے جو کوئی اور نہیں کر پایا۔‘

سرینا ولیمز کا کہنا تھا کہ اُن کا یہ بیان بلی جین کِنگ کی خدمات کی توہین ہے، جنھوں نے خواتین کے مقابلوں میں کئی دروازے کھولے، ’اور اِس کرہّ ارض پر موجود ہر خاتون کی بھی توہین ہے۔‘

انھوں نے اس بیان کو بہت غلط قرار دیا۔

تاہم بعد میں ریمنڈ مور نے اپنے بیان پر معافی مانگ لی۔

انڈین ویلز کے انتظامی سربراہ نے جنسی تعصب کا مظاہرہ کرتے ہوئے کہا کہ خاتون کھلاڑیوں کو گھٹنوں پر گر کر ’خدا کا شکر ادا کرنا چاہیے کے روجر فیڈرر اور رافیل نیدال پیدا ہوئے۔‘

سرینا ولیمز اور وکٹوریہ کے درمیان کھیلے گئے بی این پی پیریبس اوپن کے فائنل سے قبل بات کرتے ہوئے ریمنڈ مور کا کہنا تھا کہ خواتین کی ٹینس ایسوسی ایشن (ڈبلیو ٹی اے) ’خوش نصیب تنظیم ہے جو مردوں کی کامیابیوں کی وجہ سے آگے بڑھی ہے۔‘

ادھر ٹینس کے عالمی نمبر ایک کھلاڑی نوواک جوکووچ نے کھیل کی انعامی رقم پر سوال اٹھاتے ہوئے کہا ہے کہمردوں کے لیے انعام کی رقم خواتین کی نسبت زیادہ ہونی چاہیے کیونکہ اس کو دیکھنے کے لیے زیادہ لوگ آتے ہیں۔

اسی بارے میں