’یہاں آئیے، کچھ مستی کرتے ہیں‘

انڈین کرکٹ ٹیم کے کپتان مہندر سنگھ دھونی نے ٹی20 ورلڈ کپ کے سیمی فائنل میں ٹیم کی شکست کے بعد اپنی ریٹائرمنٹ سے متعلق سوالات کے جوابات بڑے ہی انوکھے انداز میں دیے۔

ممبئی کے وانکھڑے سٹیڈیم میں میچ کے بعد دھونی پریس کانفرنس میں صحافیوں سے بات چیت کر رہے تھے۔

اس دوران آسٹریلیا کے ایک صحافی سیم فیرس نے مہندر سنگھ دھونی سے پوچھا کہ کیا ویسٹ انڈیز سے اس شکست کے بعد کیا وہ آگے بھی کھیلنا جاری رکھیں گے؟

دھونی نے پہلے تو صحافی سے اپنا سوال دہرانے کو کہا۔

فیرس کے سوال دہرانے کے بعد دھونی نے ہنستے ہوئے کہا ’یہاں آئیے، کچھ مستی کرتے ہیں۔‘

اس پر فیرس جب ہچکچائے تو دھونی نے انہیں اپنی بغل کی کرسی پیش کرتے ہوئے ان سے سٹیج پر آنے کی گزارش کی۔ دھونی کے اصرار پر فیرس ان کے بغل میں جا کر بیٹھ گئے۔

دھونی نے فیرس کے کندھے پر ہاتھ رکھتے ہوئے کہا ’مجھے لگا کہ شاید کوئی بھارتی صحافی ہے، کیونکہ میں آپ سے تو یہ نہیں پوچھ سکتا کہ آپ کا کوئی بھائی یا بیٹا ہے جو وکٹ کیپر ہے اور بھارت کے لیے کھیل سکتا ہے۔‘

تصویر کے کاپی رائٹ Getty

اس کے بعد دھونی نے فیرس سے پوچھا: ’کیا مجھے بھاگتا دیکھ کر آپ کو لگتا ہے کہ میں ان فٹ ہوں؟" فیرس نے کہا ’نہیں، آپ تو بہت تیزی سے بھاگتے ہیں۔‘

پھر دھونی نے پوچھا ’کیا آپ کو لگتا ہے کہ میں 2019 ورلڈ کپ میں کھیل سکتا ہوں؟‘ اس پر فیرس نے جواب دیا ’ہاں آپ کو کھیلنا چاہیے۔‘

پھر دھونی نے کہا ’آپ نے میرے سوال کا جواب دے دیا۔‘

فروری میں بنگلہ دیش میں ہونے والے ایشیا کپ کے لیے روانہ ہونے سے پہلے بھی ایک صحافی نے دھونی نے ریٹائرمنٹ کو لے کر سوال پوچھا تھا۔

اس وقت دھونی نے کہا تھا ’اگر میں نے ایسے سوال کا جواب 15 دن یا ایک ماہ پہلے دے دیا ہے تو پھر میرا جواب نہیں بدلے گا۔ یہ ٹھیک ویسے ہی ہے جیسے کوئی مجھ سے پوچھے کہ میرا نام کیا ہے اور میں ہر بار کہوں ایم ایس دھونی۔‘

اسی بارے میں