’ڈوپنگ ایجنسی کے اہلکاروں کو روس میں دھمکیاں مل رہی ہیں‘

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption ایتھلیٹکس کی عالمی تنظیم آئی اے اے ایف کی معائنہ کمیٹی آئندہ ماہ جنوری میں روس جائے گی

کھیلوں میں ممنوعہ ادویات کے انسداد کے عالمی ادارے (ورلڈ اینٹی ڈوپنگ ایجنسی) نے کہا ہے کہ روس میں اینٹی ڈوپنگ کے اہلکاروں کو ایتھلیٹس کے نمونے لینے سے روکا جا رہا ہے اور سکیورٹی ایجنسی اہلکاروں کو دھمکیاں دے رہی ہے۔

یہ رپورٹ ایک ایسے موقع پر سامنے آئی ہے جب چند روز بعد ایتھلیٹکس گورننگ باڈی روس کو اولمپکس مقابلوں میں شمولیت کے بارے میں فیصلہ کرے گی۔

٭ ’روس کو ایتھلیٹکس مقابلوں سے معطل کر دیا جائے‘

٭ ممنوعہ ادویات کا استعمال: ’ایتھلیٹکس ادارہ تحقیق دبا رہا ہے‘

گذشتہ سال نومبر میں ایتھلیٹکس کی عالمی تنظیم آئی اے اے ایف نے کھیلوں میں ممنوعہ ادویات کے استعمال سے متعلق رپورٹ سامنے آنے کے بعد روس کی ایتھلیٹکس فیڈریشن پر پابندی عائد کر دی تھی۔

ایتھلیٹکس کی عالمی تنظیم آئی اے اے ایف نے ورلڈ اینٹی ڈوپنگ ایجنسی کی رپورٹ سامنے آنے کے بعد یہ فیصلہ کیا تھا، جس کے مطابق روس میں ’حکومت ڈوپنگ میں ملوث تھی۔‘

روس کی ایتھلیٹکس ایسوسی ایشن نے اپنے معاملات بہتر کرنے کا وعدہ کیا تھا۔

ورلڈ اینٹی ڈوپنگ ایجنسی کا کہنا ہے کہ نومبر کے بعد سے اب تک چھ ماہ کے عرصے میں اینٹی ڈوپنگ کے حکام کو روس کے قانون نافذ کرنے والے ادارے ڈرا دھمکا رہے ہیں۔

رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ ادویات کے ٹیسٹ کے لیے کیے گئے نمونوں کو تبدیل کیا گیا ہے۔ 23 صفحات پر مبنی رپورٹ کے مطابق فروری سے مئی کے دوران 736 افراد کے ٹیسٹ کے لیے کی گئی درخواست کو مسترد یا معطل کر دیا گیا۔

ٹیسٹ نہ کروانے کی مختلف وجوہات بیان کی گئی جیسے ایتھلیٹ کی مکمل معلومات فراہم نہ کرنا، خون کا نمونہ نہ دینا وغیرہ

رپورٹ کے مطابق ڈوپنگ کنٹرول کرنے والے اہلکار جب عسکری تنصیبات والے علاقے میں گئے تو مسلح حکومتی ایجنٹوں نے انھیں دھمکیاں دیں۔

رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ روس میں ایتھلیٹس کو اکثر فوجی چھاؤنی والے شہروں رہائیش دی جاتی ہے تاکہ مشکل رسائی کی وجہ سے ڈرگ ٹیسٹ کروانے والے اہلکار وہاں نہ جا سکیں۔

رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ ایک خاتون ایتھلیٹ سے جن پیشاب کا نمونہ مانگا گیا تو انھوں نے اپنے کپڑوں میں پہلے سے ایک بوتل چھپا رکھی تھی۔جو وہ اپنے ٹیسٹ کے لیے دینا چاہتی تھیں۔

یاد رہے کہ گذشتہ سال نومبر میں آئی اے اے ایف کے کونسل اراکین نے روس پر پابندی لگائے جانے کے حق میں ووٹ دیا تھا۔

اسی بارے میں