’روسی ایتھلیٹس پر پابندی کا فیصلہ غیر منصفانہ ہے‘

تصویر کے کاپی رائٹ

روس کے صدر ولادی میر یوتن نے اولمپکس سمیت ایتھلیٹکس کے عالمی مقابلوں میں روسی ایتھلیٹ پر پابندی برقرار رکھنے کے فیصلے کو ’غیر جانبدرانہ اور غیر منصفانہ‘ قرار دیا ہے۔

گذشتہ سال ورلڈ اینٹی ڈوپنگ ایجنسی کی رپورٹ منظرِعام پر آنے کے بعد انٹرنیشنل ایتھلیٹکس فیڈریشن نے ممنوعہ ادویات کے استعمال کی وجہ سے روس کے ایتھلیٹس پر پابندی عائد کی تھی۔

٭ ’روس کو ایتھلیٹکس مقابلوں سے معطل کر دیا جائے‘

٭ ممنوعہ ادویات کا استعمال: ’ایتھلیٹکس ادارہ تحقیق دبا رہا ہے‘

اس پابندی کے بعد روس کے ایتھلیٹ ریو اولمپکس سمیت ایتھلیٹکس کے عالمی مقابلوں شرکت نہیں کر سکتے ہیں۔

انٹرنیشنل ایتھلیٹکس فیڈریشن کاکہنا ہے کہ ممنوعہ ادویات کی روک تھام کی یقین دہانی پر روسی ایتھلیٹس انفرادی طور پر عالمی مقابوں میں شرکت کر سکتے ہیں۔

صدر پوتن نے کہا کہ وہ روسی ایتھلیٹس کی پابندی کے معاملے پر انٹرنیشنل اولمپکس کمیٹی اور ورلڈ اینٹی ڈوپنگ ایجنسی مداخلت کرنے کی درخواست کریں گے۔

انٹرنیشنل ایتھلیٹکس فیڈریشن نے یہ فیصلہ واڈا کی تازہ رپورٹ کی روشنی میں کیا ہے جس میں کہا گیا تھا کہ روس میں اینٹی ڈوپنگ کے اہلکاروں کو ایتھلیٹس کے نمونے لینے سے روکا جا رہا ہے اور سکیورٹی ایجنسی اہلکاروں کو دھمکیاں دے رہی ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption ایتھلیٹکس کی عالمی تنظیم آئی اے اے ایف کی معائنہ کمیٹی نےروس کادورہ کیا

روس کی وزارت کھیل نے واڈا کے فیصلے پر سخت مایوسی کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ انھوں نے عالمی برادری کا اعتماد حاصل کرنے کے لیے تمام اقدامات کیے ہیں۔

روسی وزارت کھیل نے ایک بیان میں کہا کہ صاف ستھرے ایتھلیٹوں کے ارمانوں کو دوسرے قابل نفرت ایتھلیٹوں اور حکام کے اعمال کی وجہ سے چکنا چور کیا جا رہا ہے۔’ان ایتھلیٹوں نے اولمپکس میں شرکت کے لیے اتنی قربیانیاں دیں اور اب ایسا لگتا ہے کہ ان کی قربانیاں رائیگاں جائیں گی۔‘

روسی وزارت کھیل نے اپنے بیان میں کہا کہ گذشتہ سال عارضی پابندی لگنے کے بعد انھوں نے عالمی برادری کا اعتماد جیتنے کے لیے ہر وہ عمل کیا جس کی ضرورت تھی۔ روسی وزارت کھیل نے کہا کہ ہمارے ایتھلیٹوں کا برطانیہ کی اینٹی ڈوپنگ ایجنسی سے ٹیسٹ کیے جا رہے ہیں اور وہ سمجھتے ہیں کہ واڈا کی تمام ضرورتوں کو پورے کرتے ہیں۔

پچھلے ہفتے واڈا نے اپنی رپورٹ میں بتایا تھا کہ روسی حکام انھیں ایتھلیٹوں کے ٹیسٹ لینے میں دشواری پیدا کر رہے ہیں۔ رپورٹ میں کہا گیا تھا کہ ایتھلیٹوں کو فوجی علاقوں میں رہائش مہیا کی جاتی ہے اور جب حکام نے ان کا ٹیسٹ لینے کے وہاں جانے کی کوشش کی تو سکیورٹی اہلکاروں نےانھیں وہاں جانے سے روکا۔

واڈا کی رپورٹ میں مزید میں کہا گیا تھا کہ ایک خاتون ایتھلیٹ سے جن پیشاب کا نمونہ مانگاگیا تو انھوں نے اپنے کپڑوں میں پہلے سے ایک بوتل چھپا رکھی تھی۔جو وہ اپنے ٹیسٹ کے لیے دینا چاہتی تھیں۔

یاد رہے کہ گذشتہ سال نومبر میں آئی اے اے ایف کے کونسل اراکین نے روس پر پابندی لگائے جانے کے حق میں ووٹ دیا تھا۔

اسی بارے میں