سسیکس نےاننگز ڈیکلیئر کر دی، پاکستان کی دوبارہ بیٹنگ

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption اظہر علی نے اس دوران فرسٹ کلاس میں اپنے آٹھ ہزار رنز بھی مکمل کیے

سسیکس کاونٹی نے پاکستانی کرکٹ ٹیم کے 363 رنز کے جواب میں 291 رنز بنا کر اننگز ڈیکلیئر کر دی۔پاکستان نے اپنی دوسری اننگز میں ایک وکٹ کے نقصان پر71 رنز بنائے ہیں۔

پاکستان کے آؤٹ ہونے والے کھلاڑی محمد حفیظ تھے جو 23 رنز بنا کر آؤٹ ہو گئے۔ شان مسعود اور اظہر علی وکٹ پر موجود ہیں۔

میچ کا سکور کارڈ

سسیکس کاؤنٹی کی اننگز کی خاص بات ابتدائی بلے بازوں کی عمدہ بیٹنگ تھی جنھوں پہلی وکٹ کی شراکت میں212 رنز بنائے۔ پہلی وکٹ گرنےکے بعد پاکستانی بولر وقفے وقفے سے وکٹیں حاصل کرتے ہیں اور جب سسیکس کا مجموعی سکور 291 رنز پر پہنچا تو اس کے پانچ کھلاڑی پویلین لوٹ چکے تھے۔

پاکستان کی جانب سے عمران خان اور وہاب ریاض نے دو دو وکٹیں حاصل کیں جبکہ آف سپنر ذوالفقار بابر کے حصے میں ایک وکٹ آئی۔ سہیل خان کوئی وکٹ نہ حاصل کر سکے۔

پاکستان نے اپنی پہلی اننگز میں پانچ وکٹوں کے نقصان پر 363 رنز بنا کر اننگز ڈیکلیئر کر دی تھی۔ اس میچ کی خاص بات اظہر علی کی شاندار بیٹنگ تھی جنھوں نے 145 رنز بنائے۔

یہ ان کی دورۂ انگینڈ میں دو میچوں میں دوسری سینچری ہے۔ ان کے علاوہ یونس خان (59) اور کپتان مصباح الحق (68) نے بھی پہلے ٹیسٹ سے قبل اچھی بیٹنگ پریکٹس کی۔

تاہم اگر مصباح کو توقع تھی کہ ان کے بولر جلدی وکٹیں حاصل کر کے سسیکس کے بلےبازوں پر دباؤ ڈال سکیں گے تو انگلش کاؤنٹی کے اوپنروں کے ارادے مختلف تھے۔ انھوں نے ایک روزہ کرکٹ کے انداز میں کھیلتے ہوئے اور کسی پاکستانی بولر کو خاطر میں نہ لاتے ہوئے پہلی وکٹ کی شراکت میں دو سو رنز جوڑ ڈالے۔

ویلز اور فنچ نے 212 رنز کی شراکت قائم کی۔ سسیکس کی جانب سے ویلز 93 رنز بنا کر وہاب ریاض کی گیند پر سرفراز احمد کے ہاتھوں کیچ آؤٹ ہوئے۔ ان کے ساتھی ہیری فنچ 103 رنز بنا کر وہاب ریاض کا دوسرا شکار بنے۔

تاہم پاکستان کے لیے خوش آئند بات یہ ہے کہ اس دورے میں اس کے اہم بلےباز اظہر علی، یونس خان اور اسد شفیق فارم میں نظر آ رہے ہیں۔اس بات کا پاکستان کو 14 جولائی کو شروع ہونے والے پہلے ٹیسٹ میچ میں فائدہ ہو سکتا ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption یونس خان نے فرسٹ کلاس میں اپنے 16000 رنز مکمل کیے

سسیکس نے ٹاس جیت کر پاکستان کو پہلے بیٹنگ کی دعوت دی لیکن پاکستان کا آغاز اچھا نہیں رہا اور شان مسعود صرف چار رنز بناکر آؤٹ ہوگئے جبکہ دوسرے اوپنر محمد حفیظ بھی 17 رنز بناکر آرچر کا شکار بنے۔

اس کے بعد اظہر علی نے پہلے یونس خان کے ساتھ تیسری وکٹ کے لیے 125 رنز اور پھر کپتان مصباح الحق کے ساتھ 146 رنز کی اہم شراکت داریاں قائم کیں۔

اپنی اننگز کے دوران یونس خان اور اظہر علی نے فرسٹ کلاس کرکٹ میں بالترتیب اپنے 16 ہزار اور آٹھ ہزار رنز بھی مکمل کیے۔

اس سے قبل سمرسیٹ کے خلاف یونس خان نے پہلی اننگز میں سنچری سکور کی تھی جبکہ اظہر علی نے دوسری اننگز میں سنچری بنائی تھی۔

سسیکس کی جانب سے اپنا پہلا میچ کھیلنے والے ویسٹ انڈیز کی انڈر 19 ٹیم کے آل راؤنڈر جوفرا آرچر نے پانچ میں سے چار وکٹیں حاصل کیں جبکہ ایک وکٹ برگز نے حاصل کی۔

انگلینڈ کے خلاف پاکستان کا پہلا ٹیسٹ 14 جولائی سے لارڈز کے میدان پر کھیلا جائے گا۔

اسی بارے میں