ریو جانے والا انڈین پہلوان ڈوپ ٹیسٹ میں ناکام

تصویر کے کاپی رائٹ
Image caption نرسمہا، کُشتی میں 74 کلوگرام وزن کے مقابلوں میں انڈیا کی نمائندگی کرنے کے لیے ریو جانے والے تھے

برازیل کے شہر ریو ڈی جنیرو میں آئندہ ماہ منعقد ہونے والے اولمپکس مقابلوں میں شرکت کے لیے منتخب کیے جانے انڈین پہلوان نرسہما یادو ممنوعہ قوت بخش ادویات کے ٹیسٹ میں ناکام ہوگئے ہیں۔

انڈین خبر رساں ایجنسی پی ٹی آئی کا کہنا ہے کہ نرسہما کا ڈوپ ٹیسٹ مثبت آنے کی تصدیق نیشنل اینٹی ڈوپنگ ایجنسی کے ڈائریکٹر جنرل نے ٹوئٹر پر اپنے مختصر پیغام میں کی ہے۔

نرسمہا، کُشتی میں 74 کلوگرام وزن کے مقابلوں میں انڈیا کی نمائندگی کرنے کے لیے ریو جانے والے تھے۔

اس کلاس میں انڈیا جانے کے لیے ان کا مقابلہ 2008 کے بیجنگ اولمپکس میں کانسی اور 2012 کے لندن اولمپکس میں نقرئی تمغہ جیتنے والے سشیل کمار سے تھا لیکن بھارتی کُشتی یونین نے نرسمہا کو ریو بھیجنے کا فیصلہ کیا تھا۔

اس فیصلے کے بعد سشیل کمار نے نرسمہا کو مقابلہ کرنے کا چیلینج بھی دیا تھا اور کہا تھا کہ اس مقابلے کے فاتح کو ریو بھیجا جائے۔

تصویر کے کاپی رائٹ EPA
Image caption نرسمہا یادو نے گزشتہ سال لاس ویگاس میں منعقد ہونے والی عالمی کُشتی کے عالمی چمپیئن شپ میں کانسی کا تمغہ جیتا تھا

انھوں نے نرسمہا کو ریو بھیجنے کے فیصلے کو عدالت میں بھی چیلنج کیا تھا لیکن عدالت نے ان کی درخواست خارج کر دی تھی۔

نرسمہا یادو نے گزشتہ سال لاس ویگاس میں منعقد ہونے والی عالمی کُشتی کے عالمی چمپیئن شپ میں کانسی کا تمغہ جیتا تھا اور اس طرح ریو کے لیے کوالیفائی بھی کیا تھا۔

وہ سنہ 2014 کے انچیون ایشیائی کھیلوں میں 74 کلو گرام وزن کی کلاس میں کانسی کا تمغہ بھی جیت چکے ہیں۔

اس کے علاوہ انھوں نے سنہ 2010 کے دولت مشترکہ کھیلوں میں بھی طلائی تمغہ جیتا تھا۔

اسی بارے میں