روس ویٹ لفٹنگ ٹیم پر پابندی کے خلاف اپیل کرے گا

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption روس کی آٹھ رکنی ٹیم کے دو ارکان پر ڈوپنگ کی خلاف ورزی کے تحت پہلے ہی پابندی کا شکار ہیں

روس کی ویٹ لفٹنگ فیڈریشن نے اپنے کھلاڑیوں پر برازیل کے شہر ریو میں شروع ہونے والے اولمپکس مقابلوں میں شرکت پر پابندی کے خلاف اپیل کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔

ریو اولمپکس کے لیے تمام کھیلوں کی فیڈریشنز اپنے طور پر فیصلہ کریں گی کہ روسی کھلاڑیوں کو ڈوپنگ سکینڈل کے بعد مقابلوں میں شرکت کی اجازت ہو گی یا نہیں۔

٭ ریو اولمپکس: روسی کھلاڑیوں کی قسمت کا فیصلہ پینل پر

عالمی اولمپک کمیٹی (آئي او سی) نے کہا ہے کہ اس فیصلے کے بعد ایک تین رکنی پینل حتمی طور پر یہ طے کرے گا کہ آیا روسی کھلاڑی ریو اولمپکس میں شرکت کر سکیں گے یا نہیں۔

روس کی حکومت کی جانب سے ڈوپنگ کے عمل کی پشت پناہی کی خبر سامنے آنے کے بعد بین الاقوامی ویٹ لفٹنگ فیڈریشن نے روس کے ریو اولمپکس میں شرکت پر پابندی عائد کر دی تھی۔

یہ اپیل 5 اگست سے شروع ہونے والے کھیلوں سے قبل کی جائے گی۔

آٹھ رکنی ٹیم کے دو ارکان پر ڈوپنگ کی خلاف ورزی کے تحت پہلے ہی پابندی کا شکار ہیں جبکہ چار مزید کا نام ڈاکٹر رچرڈ مک لیرین کی رپورٹ میں آیا ہے۔

ابھی تک 250 روسی کھلاڑیوں کو ریو میں ہونے والے اولمپکس میں شرکت کرنے کے لیے غیر ممنوعہ ادویات سے پاک قرار دیا گیا ہے۔

انسداد منشیات کی عالمی ایجنسی واڈا نے یہ تجویز دی تھی کہ تمام روسی کھلاڑیوں پر پابندی عائد کر دینی چاہیے۔

یہ تجویز اس نے آزادانہ طور پر تیار کی جانے والی تحقیقاتی رپورٹ کے بعد دی تھی جس میں یہ پایا گیا تھا کہ روس میں زیادہ تر اولمپک کھیلوں میں ’وسیع پیمانے پر‘ چار سال تک ’ڈوپنگ پروگرام چلایا گیا تھا‘۔

اسی بارے میں