ریو میں فیلپس کے مزید دو طلائی تمغے

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption 2014 میں ریٹائرمنٹ واپس لینے والے مائیکل فیلپس اب تک ریو اولمپکس میں تین طلائی تمغے جیت چکے ہیں

برازیل کے شہر ریو ڈی جنیرو میں جاری اولمپکس مقابلوں میں چوتھے دن امریکہ کے کھلاڑیوں نے مزید چار طلائی تمغے جیتے ہیں اور یوں وہ مجموعی طور پر 26 تمغوں کے ساتھ بدستور میڈل ٹیبل پر سرفہرست ہے۔

چوتھے دن کی خاص بات اولمپکس کی تاریخ میں سب سے زیادہ تمغے جیتنے کا اعزاز رکھنے والے امریکی تیراک مائیکل فیلپس کے مزید دو طلائی تمغے تھے۔

٭ ریو اولمپکس کا میڈل ٹیبل

٭ ریو اولمپکس 2016 پر بی بی سی کا خصوصی ضمیمہ

انھوں نے یہ تمغے دو سو میٹر بٹر فلائی اور چار ضرب دو سو میٹر ریلے مقابلوں میں حاصل کیے۔

2014 میں ریٹائرمنٹ واپس لینے والے مائیکل فیلپس اب تک ریو اولمپکس میں تین طلائی تمغے جیت چکے ہیں جبکہ اولمپکس مقابلوں میں ان کے کل تمغوں کی تعداد 25 ہے جن میں 21 طلائی اور چاندی اور کانسی کے دو، دو میڈل شامل ہیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption اولمپکس میں مائیکل فیلپس کے تمغوں کی تعداد 25 ہے جن میں 21 طلائی اور چاندی اور کانسی کے دو، دو میڈل شامل ہیں

فیلپس نے دو سو میٹر بٹرفلائی مقابلے میں جنوبی افریقہ کے تیراک لی کلوس کو ہرا کر 2012 کے لندن اولمپکس میں اسی مقابلے میں اپنی شکست کا بدلہ بھی لیا۔

انھوں نے چار ضرب دو سو میٹر مقابلے میں امریکی ٹیم کو طلائی تمغہ دلوایا جبکہ برطانیہ کی ٹیم نے اس مقابلے میں چاندی جبکہ جاپان نے کانسی کا تمغہ حاصل کیا۔

امریکہ کو دن کا تیسرا طلائی تمغہ بھی تیراکی میں ہی ملا جب خاتون تیراک کیٹی لیڈیکی نے دو سو میٹر فری سٹائل مقابلہ جیتا۔ یہ کیٹی کا انفرادی طور پر ریو میں دوسرا اولمپک گولڈ میڈل ہے۔

کیٹی نے اس دوڑ میں سویڈن کی سارہ سوسٹروم کو شکست دی جبکہ کانسی کا تمغہ آسٹریلیا کی ایما میکوین کے حصے میں آیا۔

جمناسکٹس میں امریکی خواتین کی ٹیم نے عمدہ کارکردگی کا مظاہرہ کرتے ہوئے روس کی خواتین کی ٹیم کو شکست سے دوچار کیا اور طلائی تمغہ حاصل کیا۔

19 سالہ امریکی جمناسٹ سمون بائلز نے شاندار کھیل کا مظاہرہ کیا۔ بائلز کو رومانیہ کی نادیہ کومانیچی کے بعد جمناسٹکس کی تاریخ کی سب سے بڑی سٹار قرار دیا جا رہا ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption امریکی جمناسٹ سمون بائلز کو رومانیہ کی نادیہ کومانیچی کے بعد جمناسٹکس کی تاریخ کی سب سے بڑی سٹار قرار دیا جا رہا ہے

تاہم چوتھا دن تمام امریکی کھلاڑیوں کے لیے اچھا ثابت نہیں ہوا اور امریکہ کی سٹار ٹینس کھلاڑی سیرینا ولیمز یوکرین کی الینا سویتولینا سے ہار کر اولمپکس سے باہر ہو گئیں۔

سرینا اس میچ میں منتشر اور برہم نظر آئیں اور انھوں نے میچ کے دوران 37 غلطیاں کیں جو ان کے لیے مہنگی ثابت ہوئیں۔

میڈل ٹیبل پر دوسرے نمبر پر موجود چین نے مقابلوں کے چوتھے دن تین طلائی تمغے حاصل کیے۔

سنکرونائزڈ ڈائیونگ کے دس میٹر پلیٹ فارم مقابلے میں چینی کھلاڑیوں نے لگاتار پانچویں اولمپکس مقابلوں میں اپنے ملک کو طلائی تمغہ دلوایا۔

اس کے علاوہ ویٹ لفٹنگ میں چین کے 22 سالہ شی زیہونگ نے 69 کلوگرام وزن کے مقابلے میں مجموعی طور پر 352 کلوگرام وزن اٹھا کر طلائی تمغہ جیتا۔ یہ ویٹ لفٹنگ میں چین کا تیسرا گولڈ میڈل ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption ہنگری کی کاتنکا ہوسو کو ’خاتونِ آہن‘ کہا جاتا ہے

ہنگری کی ’خاتونِ آہن‘ کہلانے والی کاتنکا ہوسو نے دو سو میٹر انفرادی میڈلی میں اول نمبر پر آ کر اپنے طلائی تمغوں کی تعداد تین تک پہنچا دی۔ انھی کی بدولت ہنگری کل چار طلائی تمغوں کے ساتھ پوائٹس ٹیبل پر چوتھے نمبر پر پہنچ گیا ہے۔

ادھر فیلڈ ہاکی کے مقابلوں میں پول بی کے ایک میچ میں انڈیا نے ارجنٹائن کو ایک کے مقابلے پر دو گول سے شکست دے دی۔ اس سے قبل اپنے پہلے میچ میں انڈیا جرمنی سے ہار گیا تھا۔

چوتھے دن کے اختتام پر امریکہ نو طلائی، آٹھ نقرئی اور کانسی کے نو تمغوں کے ساتھ سرفہرست ہے جبکہ چین آٹھ طلائی، تین نقرئی اور کانسی کے چھ تمغوں کے ساتھ دوسرے نمبر پر ہے۔

ہنگری چار طلائی، ایک نقرئی اور ایک کانسی کے تمغے کے ساتھ تیسری پوزیشن پر آ گیا ہے جبکہ آسٹریلیا چوتھے اور روس پانچویں نمبر پر ہے۔

اسی بارے میں