ریو اولمپکس میں ’انڈين وزیرِ کھیل کا ترش اور جارحانہ برتاؤ‘

تصویر کے کاپی رائٹ PTI
Image caption کمیٹی کا الزام ہے کہ وجے گوئل نے اپنے کچھ ساتھیوں کے ساتھ ان جگہوں پر جانے کی کوشش کی جہاں جانے کے لیے ان کے پاس ایکریڈشن کارڈ نہیں تھا

ریو اولمپکس کی آرگنائزنگ کمیٹی نے انڈیا کے وزیرِ کھیل وجے گوئل کے ایکریڈیشن کارڈ کو منسوخ کرنے کی دھمکی دی ہے۔

آرگنائزنگ کمیٹی نے کہا ہے کہ اگر ریو میں بھارتی وزیرِ کھیل وجے گوئل اور ان کے بعض ساتھی اپنا ’جارحانہ اور ترش‘ برتاؤ ترک نہیں کرتے تو ان کے ایکریڈیشن کارڈ کو منسوخ کر دیا جائے گا۔

٭ خود کو ایتھلیٹ ظاہر کرنے پر کوچ کو واپس بھیج دیا گیا

٭ ریو جانے والا انڈین پہلوان ڈوپ ٹیسٹ میں ناکام

کمیٹی کا الزام ہے کہ وجے گوئل نے اپنے کچھ ساتھیوں کے ساتھ ان جگہوں پر جانے کی کوشش کی جہاں جانے کے لیے ان کے پاس ایکریڈشن کارڈ نہیں تھا۔

ریو اولمپکس میں برصغیر کے امور کی مینیجر سارا پیٹرسن نے انڈین ٹیم کے سربراہ راکیش گپتا کو ایک خط تحریر کر کے اس بارے میں شکایت بھی کی ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ EPA
Image caption انڈیا کے وزیرِ کھیل وجے گوئل نے یہ تنازع سامنے آنے کے بعد وضاحت پیش کی ہے

سارا پیٹرسن نے اپنے خط میں لکھا ’ایسی کئی اطلاعات سامنے آئی ہیں کہ انڈین وزیرِ کھیل ایسی جگہوں پر جانا چاہ رہے تھے جہاں جانے کی انھیں اجازت نہیں تھی۔ جب ریو اولمپکس کی انتظامیہ نے انھیں سمجھانے کی کوشش کی تو ان کا برتاؤ سخت اور جارحانہ تھا۔‘

انڈیا کے وزیرِ کھیل وجے گوئل نے یہ تنازع سامنے آنے کے بعد وضاحت پیش کی ہے۔

انھوں نے اپنے ٹویٹ میں لکھا جہاں تک ان کی معلومات ہیں انھوں نے سارے اصول اور قواعد پر مکمل طور عمل کیا ہے۔

انھوں نے کہا: ’ایسا لگتا ہے کہ کچھ غلط فہمی ہوگئی ہے کیونکہ ہم نے انتظامیہ کی جانب سے بتائے گئے تمام پروٹوکولز پر عمل کیا ہے۔‘

انڈیا کی جانب سے ریو اولمپکس میں شرکت کے لیے کھلاڑیوں کا ایک بڑا وفد برازیل گیا ہے۔

اسی بارے میں