فرانس میں سعودی شہزادی کے ذاتی محافظ پر تشدد کا الزام

پیرس کا فوش ایونیو تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption پیرس کے اس علاقے میں سعودی شہزادی کا اپارٹمنٹ ہے

فرانس میں پولیس ایک سعودی شہزادی کے ذاتی محافظ سے ایک انٹیریئر ڈیکوریٹر پر حملہ کرنے اور اسے تشدد کا نشانہ بنانے کے الزامات کی تفتیش کر رہی ہے۔

شہزادی کی رہائش گاہ کی تزئین اور آرائش کے ذمہ دار اس 'انٹیریئر ڈیکوریٹر' نے جس کا نام ظاہر نہیں کیا گیا پیرس میں پولیس کو بتایا کہ شہزادی کے ذاتی محافظ نے 26 ستمبر کو پیرس کے ایک پوش علاقے میں واقع اپارٹمنٹ میں انھیں باندھ کر مکے مارے۔

فرانسیسی ذرائع ابلاغ کے مطابق اس شخص کا کہنا ہے کہ اسے اپارٹمنٹ کے اندر تصویریں لینے پر زد و کوب کیا گیا۔

سعودی شہزادی جنہیں سفارتی استثنیٰ حاصل ہے کے بارے میں معلوم نہیں کہ وہ کہاں ہیں۔

پولیس نے اب تک اپارٹمنٹ کی تلاشی بھی نہیں لی ہے اور شہزادی کے نام کی تصدیق بھی نہیں کی جا رہی۔

شہزادی کے 35 سالہ ذاتی ملازم کا کہنا ہے کہ شہزادی کو گھر کے اندر کی تصاویر اتارنے پر غصہ آ گیا اور ان کا خیال تھا کہ یہ ذرائع ابلاغ کو فروخت کرنے کے لیے اتاری گئی ہیں۔

انٹیریئر ڈیکوریشن کا کام کرنے والے اس شخص کے مطابق انھیں اپارٹمنٹ کی تزئین و آرائش کرنے کے لیے یہ تصاویر درکار تھیں۔

شہزادی کے ذاتی محافظ کے وکیل نے ایک فرانسیسی اخبار کو بتایا کہ ان کے موکل ملازم پر تشدد کرنے کے الزام کی تردید کرتے ہیں۔

ان کے بقول انھوں نے ملازم کو تنبیہ کرنے کے لیے صرف معمول کے طریقۂ کار کے تحت کارروائی کی تھی۔

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں