ہٹلر کے گھر کو گرانے کا فیصلہ

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption ہٹلر کی جائے پیدائش جسے منہدم کرنے کا فیصلہ کیا گیا ہے

آسٹریا میں اس رہائش گاہ کو منہدم کرنے کا فیصلہ کیا گیا ہے جہاں ایڈولف ہٹلر پیدا ہوئے۔ اس اقدام کا مقصد اسے نیو نازیوں کا مرکز بننے سے بچانا ہے۔

یہ گھر جو پہلے ایک گیسٹ ہاؤس تھا اس کے مستقبل کے بارے میں ملک میں بحث کی جا رہی ہے۔ جس میں اسے گرانے یا اس کے استعمال میں تبدیلی پر بات کی جا رہی ہے۔

٭ ہٹلر کی فوج کے ٹوائلٹ پیپرز کی نیلامی

٭ ہٹلر کی کتاب بیسٹ سیلر کیسے بن گئی؟

یہ بحث اس وقت زیادہ سنجیدہ ہوئی جب مکان کی مالکن نے اسے بیچنے سے انکار کر دیا تھا۔

اخبار ڈائے پریسی کے مطابق ملک کے وزیر داخلہ ولف گینگ سوبوتکا نے ماہرین کی ٹیم سے کہا کہ انھوں نے اس گھر کو مہندم کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔

اخبار کا مزید کہنا ہے کہ یہاں بنائی جانے والی نئی عمارت انتظامی امور یا پھر فلاحی کاموں کے لیے استعمال میں لائی جائے گی۔

اس مکان پر حکومت اور اس کی مالکن کے درمیان جھگڑا تھا۔ سنہ 1972 سے یہ گھر کرائے پر لگا ہوا تھا اور اس وقت اس کا کرایہ پانچ ہزار تین سو ڈالر ہے۔

اس گھر کی مالکن نے جو کہ اب ریٹائرڈ ہو چکی ہیں اس تین منزلہ عمارت کو حکومت کے ہاتھ بیچنے سے متعدد بار انکار کیا۔

مگر اب یہ توقع کی جا رہی ہے کہ آسٹریا کی پارلیمان جلد ہی اس مکان کا قبضہ اس کی مالکن سے لینے کا قانون پاس کرے گی۔

اسی بارے میں