نائجیریا: لاپتہ طالبہ ’بچے کے ہمراہ ملی ہیں‘

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption ایک ماہ قبل شدت پسند تنظیم بوکو حرام کے ساتھ مذاکرات کے بعد 21 طالبات کو رہائی ملی تھی

نائجیریا کے فوجی حکام کا کہنا ہے کہ دو سال قبل چیبوک سے اغوا ہونے والی سکول کی طالبات میں سے ایک طالبہ مل گئی ہیں جن کے ساتھ ان کا دس ماہ کا بچہ بھی ہے۔

٭چیبوک سے اغوا ہونے والی مزید 21 طالبات رہا

فوج کے ترجمان سنی عثمان کا کہنا ہے کہ لاپتہ لڑکی ریاست بورنو کے شمالی علاقے پولکا سے ملی ہیں۔

خیال رہے کہ تقریباً ایک ماہ قبل شدت پسند تنظیم بوکو حرام کے ساتھ مذاکرات کے بعد 21 طالبات کو رہائی ملی تھی۔

اپریل سنہ 2014 میں 270 سے زائد طالبات کو ملک کے شمال مشرقی گاؤں سے اغوا کیا گیا تھا۔

حکام کا کہنا ہے کہ دس ماہ کے بچے کے ہمراہ ملنے والی طالبہ کو سمبیا کے جنگلات میں بوکو حرام کے ایک اڈے سے شدت پسندوں کے نکلنے کے بعد وہاں کی جانے والی تلاشی کے دوران ملی ہیں۔

یاد رہے کہ نائجیریا میں سات سال سے جاری بوکو حرام کی کارروائیوں میں 30 ہزار سے زائد ہلاکتیں ہوئیں جبکہ ہزاروں افراد لاپتہ ہیں یا تشدد کے شکارہو چکے ہیں۔

بوکو حرام کیا ہے

  • 2002 میں قائم کی جانے والی تنظیم مغربی تعلیم کی مخالف ہے۔
  • بوکو حرام کا لفظی مطلب ہے 'مغربی تعیلم حرام ہے۔‘
  • تنظیم نے 2009 میں اسلامی ریاست بنانے کے لیے کارروائیوں کا آغاز کیا۔
  • اس کے ہاتھوں نائجیریا بھر میں اور خصوصاً ملک کے مشرقی علاقوں میں ہزاروں افراد ہلاک ہو چکے ہیں۔
  • دارالحکومت ابوجا میں اس تنظیم نے اقوامِ متحدہ کے دفتر اور پولیس پر حملے بھی کیے ہیں۔
  • 200 سے زائد طالبات کے علاوہ بھی یہ سینکڑوں افراد کو اغوا میں ملوث ہے۔
  • اس تنظیم نے شدت پسند تنظیم دولتِ اسلامیہ کی حمایت کا اعلان کر رکھا ہے۔

رواں برس اکتوبر میں 21 لڑکیوں کی رہائی ریڈ کراس اور سوئس حکومت کی مدد سے ہونے والے مذاکرات کے نتیجے میں ممکن ہوئی تھی۔

بتایا گیا ہے کہ اب تک صرف ایک لڑکی کی رہائی کی تصدیق ہو سکی ہے جو کہ 19 سال کی تھی۔ 50 سے زائد طالبات اپنے اغوا کے روز ہی فرار میں کامیاب ہو گئی تھیں۔

نائجیریا کے حکام نے وعدہ کیا ہے کہ وہ اب تک بوکو حرام کی قید میں موجود 200 لڑکیوں کو بازیاب کروانے کے لیے ہر ممکن اقدامات کریں گے۔

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں