سانحہ بلدیہ: پاکستان کو مطلوب شخص بینکاک سے گرفتار

Image caption سنہ 2012 میں پیش آنے والے اس حادثے میں 250 سے زائد افراد ہلاک ہوئے تھے

تھائی لینڈ کی پولیس کا کہنا ہے کہ انھوں نے کراچی میں چار سال قبل ایک فیکٹری میں لگنے والے آگ کے سلسلے میں مطلوب ایک شخص کو گرفتار کر لیا ہے۔

تھائی لینڈ کے اخبار بنکاک پوسٹ کی رپورٹ کے مطابق پولیس کا کہنا ہے کہ انھوں نے بینکاک کے ریڈ لائٹ علاقے میں ایک ہوٹل سے عبدالرحمان نامی اس شخص کو پاکستانی وارنٹ پر حراست میں لیا۔

سانحہ بلدیہ: متاثرین کو 51 لاکھ ڈالر زرتلافی دینے کا سمجھوتہ

آگ بھتہ نہ دینے پر لگائی، 250 افراد لقمہ اجل بن گئے

خبر رساں ادارے اے ایف پی کے مطابق عبدالرحمان پر الزام ہے کہ انھوں نے کراچی کی ایک فیکٹری کو اس وقت آگ لگا دی تھی جب اس فیکٹری کے مالکان نے ان کے گروہ کو بھتہ دینے سے انکار کر دیا تھا۔

خیال رہے کہ پاکستان کی تاریخ کے اس سب سے بڑے صنعتی حادثے میں کراچی کے بلدیہ ٹاؤن میں واقع کارخانے علی انٹرپرائزز میں 12 ستمبر2012 کو لگنے والی آگ سے 255 افراد جل کر ہلاک ہوگئے تھے۔

عدالتی تحقیقات سے معلوم ہوا تھا کہ فیکٹری میں حفاظتی سہولیات موجود نہیں تھی اور حکومت کی جانب سے فیکٹری کا بہتر انداز میں جائزہ نہیں لیا گیا تھا۔

Image caption عدالتی تحقیقات سے معلوم ہوا تھا کہ فیکٹری میں حفاظتی سہولیات موجود نہیں تھی

واضح رہے کہ رواں سال ستمبر میں اس حادثے کے زخمیوں اور ہلاک ہونے والے مزدوروں کے لواحقین کو 51 لاکھ ڈالر سے زائد زر تلافی دینے کے لیے ایک سمجھوتہ طے پا یا تھا۔

جب کہ فروری میں بلدیہ ٹاؤن کی فیکٹری میں آتشزدگی کے واقعے کی مشترکہ تحقیقاتی ٹیم کی رپورٹ میں کہا گیا تھا کہ فیکٹری میں لگائی جانے والی آگ حادثاتی طور پر نہیں بلکہ منصوبہ بندی کے تحت شر انگیزی اور دہشت گرد کارروائی تھی۔

تحقیقاتی رپورٹ کے مطابق متحدہ قومی موومنٹ کے کارکن رحمان بھولا اور حماد صدیقی کی طرف سے فیکٹری مکان سے 20 کروڑ روپے بھتہ اور فیکٹری کی آمدن میں حصہ دینے سے انکار پر آگ لگائی گئی تھی۔

سنہ 2012 میں حادثے کے فوراً بعد کک کی جانب سے دس لاکھ ڈالر کی امدای رقم جاری کی گئی تھی۔ جسے پاکستان میں مزدور یونینوں نے انتہائی قلیل قرار دیا تھا۔

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں