پیرس حملے کے منصوبہ ساز ’شام میں ہلاک‘

تصویر کے کاپی رائٹ AFP

حکام کا کہنا ہے کہ نومبر 2015 میں پیرس میں حملوں کی منصوبہ بندی میں ملوث دو شدت پسند شام میں امریکی طیاروں کی بمباری میں ہلاک ہو گئے ہیں۔

امریکی محکمہ دفاع کی طرف سے جاری کیے گئے ایک بیان میں ہلاک ہونے والوں کے نام صلاح گورمت اور سامی دجیدو بتائے گئے ہیں اور ان کا تعلق نام نہاد دولت اسلامیہ سے ظاہر کیا گیا ہے۔

اسی گروپ کا ایک تیسرا رکن 4 دسمبر کو ہونے والے ایک فضائی حملے میں ہلاک ہو گیا تھا۔ بیان میں کہا گیا ہے کہ وہ 2015 میں بیلجیئم میں دہشت گرد حملے کے منصوبے میں بھی شریک تھا۔

بیان کے مطابق بمباری کے وقت تینوں شدت پسند مغربی اہداف پر حملے کی منصوبہ بندی میں مصروف تھے۔

تینوں شدت پسند تیونس سے تعلق رکھنے والے شدت پسند بوبکر الحکیم کی سربراہی میں قائم نیٹ ورک کا حصہ تھے جو 16 نومبر کو ہونے والی فضائی حملے میں ہلاک ہو چکے ہیں۔

پینٹاگون کے ترجمان پیٹر کک کا کہنا ہے کہ یہ فضائی حملہ ظاہر کرتا ہے کہ ہم کس طرح امریکہ، اپنے مفادات اور اپنے اتحادیوں پر حملوں کی منصوبہ بندی کرنے والے نام نہاد دولت اسلامیہ کے ارکان کو نشانہ بنانے کی سر توڑ کوشش کر رہے ہیں۔

انھوں نے کہا کہ اتحادی جنگی جہازوں نے نومبر سے وسط سے دولتِ اسلامیہ کے پانچ منصوبہ سازوں کو نشانہ بنایا ہے۔

نام نہاد دولت اسلامیہ نے 13 نومبر 2015 کو فرانسیسی دارالحکومت پیرس میں ہونے والے دہشت گرد حملوں کی ذمہ داری قبول کی تھی جن میں بیٹاکلان کنسرٹ ہال، ایک بڑی سٹیڈیم، ریستورانوں اور شراب خانوں کو نشانہ بنایا گیا تھا۔

ان حملوں میں 130 افراد ہلاک اور 350 سے زائد زخمی ہوئے تھے۔

اسی بارے میں