روس کسی امریکی سفارت کار کو نہیں نکالے گا: پوتن

روسی صدر ولادی میر پوتن تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption ولادی میر پوتن ردعمل پر غور کر رہے ہیں

امریکہ کی طرف سے 35 روسی سفارت کاروں کو امریکہ بدر کیے جانے اور روسی انیٹلی جنس اداروں کے خلاف پابندیاں عائد کرنے کے فیصلے کے بعد روس کے صدر ولادی میر پوتن نے کہا ہے کہ روس جواباً کسی امریکی سفارت کار کو ملک بدر نہیں کرے گا۔

صدر پوتن نے کہا: ’ہم کسی کو نہیں نکالیں گے۔‘

اس سے قبل روسی وزیرِ خارجہ سرگے لاوروف نے کہا تھا کہ انھوں نے صدر پوتن کو تجویز بھیج دی ہے کہ روس جوابی کارروائی کرتے ہوئے 35 امریکی سفارت کاروں کو ملک بدر کر دے۔

اوباما انتظامیہ نے حالیہ صدارتی انتخابات میں روس کی طرف سے ہیکنگ کے الزامات کے بعد روس پر پابندیاں عائد کرنے کا فیصلہ کیا تھا۔

امریکہ کے خفیہ اداروں کی طرف سے لگائے جانے والے ان الزامات کو روس بے بنیاد قرار دیتا ہے۔

یاد رہے کہ گذشتہ روز امریکہ نے صدارتی انتخاب میں مداخلت کے حوالے سے روس کی جانب سے سائبر حملوں کے الزام میں 35 روسی سفارت کاروں کو ملک بدر کر دیا تھا۔

روس نے ایسی کسی بھی کارروائی میں ملوث ہونے کی تردید کرتے ہوئے امریکی فیصلے کو غیر محتاط قرار دیا تھا۔

صدر پوتن کے ترجمان نے روسی ردِعمل کے بارے میں کہا تھا کہ اس سے امریکہ کو کافی تکلیف ہو گی۔ تاہم انھوں نے اس بات کی طرف اشارہ بھی دیا کہ روس صدر ٹرمپ کے عہدہ سنبھالنے تک انتظار کر سکتا ہے۔

٭امریکہ ہیکنگ کے ثبوت لائے یا پھر خاموش رہے: روس

دونوں ملکوں کے تعلقات میں پیدا ہونے والے کھنچاؤ کی وجہ سے میری لینڈ اور نیویارک میں واقع دو روسی کمپاؤنڈز کو بھی بند کر دیا جائے گا جو مبینہ طور پر اپنے ملک کے لیے خفیہ معلومات اکٹھی کرنے پر مامور ہیں۔

امریکی صدر براک اوباما نے وعدہ کیا تھا کہ وہ روس کے خلاف کارروائی کریں گے جس پر ڈیموکریٹک پارٹی کی صدارتی امیدوار ہلیری کلنٹن کی مہم کو ہیک کیا ہے۔

تاہم روس نے کسی بھی قسم کی مداخلت کی تردید کی ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Twitter

یہ اقدام متعدد امریکی سینیٹرز کی جانب سے روس پر پابندیوں کے مطالبے کے بعد سامنے آیا ہے، جن کا خیال ہے کہ یہ امریکہ میں سیاسی پرل ہاربر ہے۔

رپبلکن سینیٹرز جان میک کین اور لنڈزی گریم بھی پابندیوں کا مطالبہ کرنے والوں میں پیش پیش تھے۔

لیکن ان پابندیوں کے اعلان سے قبل ہی اپنے ایک بیان میں امریکہ کے نومنتخب صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے ہیکنگ کے الزامات کو مسترد کرتے ہوئے ’مضحکہ خیز‘ قرار دیا تھا۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption روسی سفارتکاروں کو اہلِ خانہ سمیت امریکہ سے نکل جانے کے لیے 72 گھنٹے دیے گئے ہیں

اس سے قبل امریکی محکمہ خارجہ نے واشنگٹن میں موجود سفارت خانے اور سان فرانسسکو میں روسی قونصلیٹ کے 35 روسی سفارت کاروں کو ناپسندیدہ قرار دیتے ہوئے 72 گھنٹوں میں ملک چھوڑنے کا حکم دیا تھا۔

امریکہ نے نو اداروں پر پابندیاں بھی عائد کر دی ہیں جن میں دو روسی انٹیلی جنس ایجنسیاں جی آر یو اور ایف ایس بی بھی شامل ہیں۔

ادھر روس نے ایسی کسی بھی کارروائی میں ملوث ہونے کی تردید کرتے ہوئے امریکی فیصلے کو غیر محتاط قرار دیا ہے۔

امریکی محکمہ انصاف نے کہا ہے کہ یہ اقدام ان ذمہ داروں کے خلاف ہے جنھوں نے اداروں اور انتخابی عمل کو نقصان پہنچانے کی کوشش کی۔

امریکی صدر کی جانب سے جاری بیان میں کہا گیا ہے کہ 'تمام امریکیوں کو روسی اقدامات سے خبردار رہنا چاہیے۔'

امریکی صدر کا یہ بھی کہنا ہے کہ امریکہ روس کے عناد پر مبنی سائبر کارروائیوں کے بارے میں تکنیکی معلومات بھی منظرِ عام پر لائے گا۔

اسی بارے میں