ترکی میں بم حملہ، حملہ آووروں سمیت چار ہلاک

ازمیر تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption حملہ ایک مقامی عدالت کے باہر ہوا

ترکی سے آنے والی اطلاعات کے مطابق مغربی شہر ازمیر میں ایک مقامی عدالت کے باہر دھماکے میں کم از کم دو افراد ہلاک اور دیگر زخمی ہو گئے ہیں۔

ہلاک ہونے والوں میں ایک پولیس آفیسر اور ایک عدالتی اہلکار شامل ہے۔ جبکہ سکیورٹی فورسز نے دو مشتبہ حملہ آووروں کو بھی ہلاک کر دیا ہے۔

استنبول نائٹ کلب حملہ آور کی شناخت کر لی گئی ہے: وزیر خارجہ

استنبول نائٹ کلب حملہ: مسلح شخص کی تلاش میں گرفتاریاں

ازمیر کے گورنر کے مطابق عدالت کے باہر دو مشتبہ حملہ آور پولیس کے ساتھ مقابلے میں ہلاک ہو گئے جبکہ تیسرا حملہ بھاگنے میں کامیاب ہو گیا۔

گورنر کے مطابق ابتدائی تحقیقات سے یہ پتہ چلا ہے کہ یہ کرد گروہ پی کے کے کا کام ہے۔

Image caption پولیس استنبول کے نائٹ کلب پر حملہ کرنے کے شہبے میں پہلے ہی درجنوں افراد کو گرفتار کر چکی ہے تاہم اس کا مرکزی ملزم تا حال مفرور ہے

اس سے قبل ترکی کی سرکاری خبر رساں ایجنسی کی ایک رپورٹ میں بتایا گیا تھا کہ حکومت نے استنبول کے نائٹ کلب حملے میں 39 افراد کی ہلاکت کے بعد اوغر نسل کے متعدد افراد کو گرفتار کیا ہے۔

اناتولو کا کہنا ہے کہ جن افراد کو حراست میں لیا گیا ہے وہ چین کے علاقے سنکیانگ سے آئے ہیں اور ان کے حملہ آور کے ساتھ روابط ہیں۔

ترکی کے نائب وزیر اعظم نے کہا ہے کہ استنبول کے نائٹ کلب پر حملے کا مشتبہ شخص بھی شاید اوغر ہی ہے۔

دوسری جانب پولیس استنبول کے نائٹ کلب پر حملہ کرنے کے شبہے میں پہلے ہی درجنوں افراد کو گرفتار کر چکی ہے تاہم اس کا مرکزی ملزم تا حال مفرور ہے۔

خود کو دولتِ اسلامیہ کہلانے والی شدت پسند تنظیم دولتِ اسلامیہ نے اس حملے کی ذمہ داری قبول کی تھی۔

اطلاعات کے مطابق حکام نے مبینہ طور پر ملک سے بھاگنے والے حملہ آور کو روکنے کے لیے ترکی کی سرحدوں اور ہوائی اڈوں پر حفاظتی انتظامات مزید سخت کر دیے ہیں۔

ترکی کے میڈیا نے مشتبہ شخص کی تصاویر جاری کی ہیں تاہم پولیس نے سرکاری تفصیل نہیں بتائی ہے۔

اوغر مسلمان ہیں۔ گو ان کی زبان ترکی سے مماثلت رکھتی ہے لیکن لسانی اور ثقافتی اعتبار سے وہ خود کو وسط ایشیائی ریاستوں کے زیادہ قریب سمجھتے ہیں۔

سالِ نو کے موقع پر نائٹ کلب پر ہونے والے حملے میں غیر ملکیوں سمیت 39 افراد ہلاک ہوئے تھے۔ شدت پسند تنظیم دولت اسلامیہ نے اس حملے میں ملوث ہونے کا دعوی کیا تھا۔

ترکی کے رینا نائٹ کلب میں سالِ نو کے موقعے پر کم از کم 600 افراد موجود تھے کہ اچانک ایک مسلح شخص نے اندر داخل ہو کر فائرنگ شروع کر دی۔

اسی بارے میں