ٹویوٹا کو پلانٹ لگانا ہے تو امریکہ میں لگائے ورنہ بھاری ٹیکس دیں: ٹرمپ

ٹرمپ تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption ڈونلڈ ٹرمپ امریکہ کے باہر زیادہ سستی کاریں بنانے کے لیے امریکی کمپنیوں پر سخت نکتہ چینی کرتے رہے ہیں

امریکہ کے نو منتخب صدر ڈونلڈ ٹرمپ کا کہنا ہے کہ امریکہ میں فروخت کے لیے ٹویوٹا کی میکسیکو میں بننے والی کاروں پر اضافی ٹیکس نافذ کیا جائےگا۔

انھوں نے اپنی ایک ٹويٹ میں کہا کہ اگر جاپانی کمپنی ٹویوٹا نے جنوب میں سرحد پار کرولا فیکٹری لگانے کے منصوبے پر عمل کیا تو اس پر 'بڑا سرحدی ٹیکس' نافذ کیا جائے گا۔

انھوں نے اپنی ٹویٹ میں لکھا: 'ٹویوٹا موٹرز نے کہا ہے کہ وہ امریکہ کے لیے کرولا کار بنانے کے غرض سے اپنا ایک نیا پلانٹ میکسیکو کے شہر بایا میں لگائیں گے۔ بالکل نہیں! پلانٹ لگانا ہے تو امریکہ میں لگائیں ورنہ پھر بڑا سرحدی ٹیکس ادا کریں۔'

ڈونلڈ ٹرمپ امریکہ سے باہر زیادہ سستے داموں پر کاریں بنانے کے لیے امریکی کمپنیوں پر بھی کڑی نکتہ چینی کرتے رہے ہیں۔

دوسری جانب ٹویوٹا کے صدر اکیو تویودا کا کہنا ہے کہ میکسیکو کے کارخانے میں کاروں کی پیداوار کم کرنے کا مستقل قریب میں کوئی ارادہ نہیں ہے۔

جاپان میں جمعرات کے روز ایک بیان میں تویودا نے کہا: 'ہم دیکھیں گے کہ آنے والے صدر کن پالیسیوں کو اپناتے ہیں اور اسی کے مطابق ہم اپنے اختیارات پر غور کریں گے۔'

تصویر کے کاپی رائٹ @REALDONALDTRUMP
Image caption ٹرمپ کا کہنا ہے کہ اس سے امریکیوں کے روزگار کے مواقع چھن جاتے ہیں اس لیے وہ اس چلن کو روک دیں گے

ٹویوٹا کمپنی کی امریکی شاخ نے بھی اس سلسلے میں ایک بیان جاری کیا ہے جس میں کہا گيا ہے کہ میکسیکو کے پلانٹ سے امریکہ میں ٹویوٹا کے کاریں بنانے کے کام یا پھر روزگار کے مواقع میں کوئی کمی نہیں آئے گی۔

اپریل 2015 میں ٹویوٹا کمپنی نے اعلان کیا تھا کہ وہ ایک ارب ڈالر کی لاگت سے میکسکیو میں کرولا کا کارخانہ لگائے گی۔ اس پر تعمیراتی کام گذشتہ برس نومبر میں شروع ہوا تھا۔

کمپنی کا ایک پلانٹ بایا شہر میں پہلے ہی موجود ہے۔

جمعے کو کمپنی کے حصص میں تین فیصد گراوٹ درج کی گئی لیکن پھر بعد میں اس میں بہتری دیکھنے میں آئی۔

اس سے قبل ٹرمپ نے میکسیکو میں کاریں بنانے پر امریکی کمپنی جنرل موٹرز اور فورڈ پر بھی نکتہ چینی کی تھی جس کے بعد فورڈ نے میکسیکو میں اپنے مجوزہ پلانٹ کو بند کرنے کا فیصلہ کیا اور امریکہ میں اپنے پلانٹ کو توسیع دینے کا عندیہ دیا تھا۔

نیفٹا فری تجارتی معاہدے اور کم مزدوری کی وجہ سے امریکہ میں فروخت کرنے کے لیے کمپنیوں کو امریکہ سے باہر کاریں بنانا زیادہ سودمند لگتا ہے۔

لیکن ٹرمپ کا کہنا ہے کہ اس طرح امریکیوں سے روزگار کے مواقع چھن جاتے ہیں، اس لیے وہ اس چلن کو روک دیں گے۔

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں