شام کے قصبے اعزاز میں کار بم دھماکہ، درجنوں ہلاک

azaz تصویر کے کاپی رائٹ AFP

اطلاعات کے مطابق ترکی کی سرحد کے قریب باغیوں کے زیر کنٹرول شامی قصبے اعزاز‎‎ میں کار بم دھماکے کے نتیجے میں کم از کم 43 افراد ہلاک ہوئے ہیں۔

یہ دھماکہ عدالت کے باہر ہوا جو ترکی کی سرحد سے سات کلومیٹر کے فاصلے پر واقع ہے۔

واضح رہے کہ اعزاز حالیے عرصے میں نام نہاد شدت پسند تنظیم دولت اسلامیہ کی جانب سے پرتشدد کارروائیوں کی زد میں ہے۔

کسی تنظیم نے اس دھماکے کی ذمہ داری قبول نہیں کی ہے۔

یہ دھماکہ ایسے وقت ہوا ہے جب شام میں روس اور ترکی کی کوششوں کے باعث جنگ بندی پر عملدرآمد ہو رہا ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP

دولت اسلامیہ نے اعزاز پر 2013 میں قبضہ کیا تھا اور بعد میں اس سے قبضہ چھڑا لیا گیا تھا۔ تاہم اس کے بعد سے دولت اسلامیہ نے کئی بار اس قصبے پر قبضے کی کوششیں کیں۔

اعزاز فری سیریئن آرمی کا آخری مضبوط گڑھ ہے جس کو ترکی کی حمایت حاصل ہے۔

ترکی کے ذرائع ابلاغ کا کہنا ہے کہ اس دھماکے میں چند زخمیوں کو ترکی کے قصبے کیلیس میں لایا گیا ہے۔

شام میں جاری خانہ جنگی کے باعث مختلف شہروں سے لوگوں کی بڑی تعداد نقل مکانی کر کے اعزاز میں رہائش پذیر ہوئے ہیں۔

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں