یمن میں جاری جنگ میں دس ہزار افراد ہلاک: اقوامِ متحدہ

جیمی مک گولڈرک تصویر کے کاپی رائٹ EPA
Image caption جیمی مک گولڈرک کے مطابق یمن میں 70 لاکھ لوگ ہیں جن کو یہ علم نہیں کہ اُن کو اگلی بار کھانا کب اور کیسے میسر آئے گا

اقوامِ متحدہ کے مطابق سعودی اتحادیوں اور حوثی باغیوں کے درمیان یمن میں جاری جنگ میں اب تک دس ہزار افراد ہلاک ہو چکے ہیں۔

اقوامِ متحدہ کی طرف سے کہا گیا ہے کہ اتنی بڑی تعداد میں ہلاکتیں یہ ظاہر کرتی ہیں کہ اس معاملے کو جلد از جلد ختم کرایا جائے جو کہ گذشتہ 21 مہینے سے جاری ہے۔

یمن کی بےگھر خواتین: تصویری کہانیاں

مشرقِ وسطیٰ 2016 میں بھی سلگتا رہا

سعودیہ اور ایران کی جنگ یمن میں؟

یہ بیان ایک ایسے وقت میں سامنے آیا ہے جب اقوامِ متحدہ کے نمائندے نے یمن کے صدر عبدالربہ منصور ہادی سے دارالحکومت عدن میں ملاقات کی۔

یہ لڑائی مارچ 2015 میں شروع ہوئی تھی جب سعودی فوج نے یمن کی منتخب کردہ حکومت کے خلاف بغاوت کو روکنے کے لیے ملک میں دخل اندازی کی تھی۔

تصویر کے کاپی رائٹ UNHCR/M HAMOUD
Image caption یمن میں بڑے پیمانے پر تباہی ہوئي ہے اور بعض علاقوں میں خوراک کی شدید قلت پائي جاتی ہے

اقوامِ متحدہ کے ترجمان جیمی مک گولڈرک نے کہا کہ: ’ہمارے اندازوں کے مطابق اب تک دس ہزار سے زائد افراد ہلاک جبکہ 40 ہزار سے زیادہ زخمی ہو چکےہیں۔‘ انھوں نے مزید کہا کہ اس لڑائی کے باعث ملک میں لاکھوں کی تعداد میں لوگ متاثر ہوئے ہیں اور کھانے کی شدید قلت ہے۔

’اس وقت ملک میں 70 لاکھ لوگ ہیں جن کو یہ علم نہیں کہ اُن کو اگلی بار کھانا کب اور کیسے میسر آئے گا۔‘

اقوام متحدہ کے سفیر اسماعیل اولد شیخ احمد نے امید ظاہر کی ہے کے ملک میں امن قائم ہو جائے گا۔ اسماعیل اولد شیخ احمد اس ماہ کے آخر میں اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کو اپنی رپورٹ پیش کریں گے۔

واضع رہے کہ امن قائم کرنے کی پچھلی تجاویز میں ایک نئی متحدہ حکومت بنانے کا مشورہ دیا گیا تھا جس کے عوض حوثی باغی عدن اور ملک کے دوسرے شہروں سے انخلا کر جانے پر راضی ہو گئے تھے۔ لیکن یمن کے صدر ہادی منصور نے اس مشورے کو مسترد کردیا تھا۔

اقوام متحدہ کے مطابق یمن کے حالات اس وقت دنیا کے چند سب سے بڑے بحرانوں میں سے ایک ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ EPA
Image caption یمن میں حوثی باغیوں اور سعودی اتحادیوں کے درمیان تقریبا پونے دو سال سے جنگ جاری ہے

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں