’میکسیکو سے درآمدات پر ٹیکس عائد کر کے دیوار کے اخراجات پورے کریں گے‘

میکسیکو تصویر کے کاپی رائٹ Inpho
Image caption ڈونلڈ ٹرمپ کی صدارتی مہم میں ان کا ایک اہم انتخابی نعرہ میکسیکو کی سرحد پر 2000 میل طویل دیوار تعمیر کرنا تھا

وائٹ ہاؤس کے ترجمان کا کہنا ہے کہ صدر ٹرمپ میکسیکو سے درآمدات پر ٹیکس عائد کر کے سرحد پر دیوار کی تعمیر کے اخراجات پورے کرنے کا منصوبہ بنا رہے ہیں جبکہ دیوار پر پیدا ہونے والے تنازع کے بعد میکسیکو کے صدر انریق پینا نیٹو نے اپنا طے شدہ دورہ امریکہ منسوخ کر دیا ہے۔

٭میکسیکو دیوار:’رقم نہیں دینی تو دورۂ امریکہ منسوخ کردیں‘

٭ دیوارِ ٹرمپ دیگر دیواروں کے سامنے کیسی؟

وائٹ ہاؤس کے ترجمان شون سپائسر نے نامہ نگاروں کو بتایا کہ صدر ٹرمپ نے میکسیکو سے درآمدات پر ٹیکس کے منصوبے پر ارکان کانگریس سے بات چیت کی ہے اور وہ اس کو کانگریس میں ٹیکس اصلاحات سے متعلق پیکیج کا حصہ بنانے پر غور کر رہے ہیں۔

انھوں نے کہا ہے کہ میکسیکو سے درآمدات پر 20 فیصد ٹیکس سے اندازہ سالانہ دس ارب ڈالر حاصل ہوں گے۔

انھوں نے کہا ہے کہ اس وقت ملک کی پالیسی ہے کہ ملک سے باہر بھیجی جانے والی اشیا پر ٹیکس لیا جائے جبکہ ملک میں آنے والی اشیا کو مفت میں آنے دیا جائے اور یہ مضحکہ خيز ہے۔

انھوں نے کہا ہے کہ ٹیکس کی مد میں حاصل ہونے والی رقم سے آسانی سے دیوار تعمیر ہو سکتی ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters

شون سپائسر کے مطابق اس حوالے سے منصوبہ بندی کی جا رہی ہے اور آخر میں ٹیکس کی شرح پانچ فیصد تک بھی ہو سکتی ہے۔

خیال رہے کہ اس سے قبل صدر ٹرمپ نے جمعرات کو اپنے ٹوئٹر پیغام خبردار کیا ہے کہ اگر وہ سرحد پر دیوار کی تعمیر کے اخراجات نہیں دیں گے تو انھیں واشگٹن کا طے شدہ دورہ منسوخ کر دینا چاہیے۔

یاد رہے کہ امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے ایک حکم نامے میں امریکہ اور میکسیکو کی سرحد پر دیوار کی تعمیر کرنے کا حکم دیتے ہوئے کہا تھا کہ اس منصوبے کے سو فیصد اخراجات بھی میکسیکو سے لیے جائیں گے۔

امریکی صدر نے ٹوئٹر پر اپنے پیغام میں کہا کہ میکسیکو اور امریکہ شمالی امریکہ میں آزاد تجارت کے معاہدے میں بندھے ہوئے ہیں اور امریکہ کا میکسیکو کے ساتھ 60 ارب کا تجارتی خسارہ ہے۔

انھوں نے لکھا کہ 'نیفٹا ابتدا سے ہی بڑی تعداد میں ملازمتوں اور کمپنیوں کے نقصان کی صورت میں ایک یہ یکطرفہ ڈیل ہے۔'

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption ڈونلڈ ٹرمپ کی صدارتی مہم میں ان کا ایک اہم انتخابی نعرہ میکسیکو کی سرحد پر 2000 میل طویل دیوار تعمیر کرنا تھا

صدر ٹرمپ نے مزید لکھا کہ 'اگر میکسیکو اس اشد ضروری دیوار کی تعمیر کے پیسے نہیں دے گا تو یہ بہتر ہوگا کہ وہ آئندہ ملاقات منسوخ کر دے۔'

صدر ٹرمپ کے حکم نامے کے بعد میکسیکو کے صدر انریق پینا نیٹو نے جمعرات کو قوم سے خطاب میں کہا تھا کہ میکسیکو ڈونلڈ ٹرمپ کی دیوار کے اخراجات نہیں اٹھائے گا۔

انھوں نے کہا کہ وہ امریکہ کی جانب سے رکاوٹ کھڑی کرنے کی مذمت کرتے ہیں اور 'میکسیکو دیواریں کھڑی کرنے میں یقین نہیں رکھتا'۔

تاہم اپنے خطاب میں انھوں نے 31 جنوری کو واشنگٹن کے دورے میں امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے ساتھ ملاقات کو منسوخ کرنے یا ملتوی کرنے کے بارے میں بات نہیں کی تھی۔

میکسیکو کے صدر نے قوم سے خطاب میں کہا کہ 'میں کئی بار کہہ چکا ہوں کہ میکسیکو کسی بھی دیوار کی تعمیر کے لیے رقم نہیں دے گا۔ یہ ایسے وقت میں ہو رہا ہے جب ہم شمالی امریکہ میں تعاون کے نئے قوانین، تجارت، سرمایہ کاری، سکیورٹی، امیگریشن کی بات کر رہے ہیں۔'

انھوں نے مزید کہا 'بطور صدر میں میکسیکو اور میکسیکنز کے حقوق کے دفاع کی پوری ذمہ داری لیتا ہوں۔'

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images

ان کا کہنا تھا کہ وہ واشنگٹن میں میکسیکو کے حکام کی حتمی رپورٹ اور چیمبر آف کامرس، گورنرز وغیرہ کے مشورے کے بعد فیصلہ کریں گے کہ اگلا قدم کیا ہونا چاہیے۔

صدر ٹرمپ نے میکسیکو کی سرحد پر دیوار کی تعمیر کے علاوہ ایک ان امریکی شہروں کی فنڈنگ روکنے کے احکامات پر دستخط کیے ہیں جو غیر قانونی تارکین وطن کے گڑھ ہیں۔

ڈونلڈ ٹرمپ کی صدارتی مہم میں ان کا ایک اہم انتخابی نعرہ میکسیکو کی سرحد پر 2000 میل طویل دیوار تعمیر کرنا تھا۔

اسی بارے میں