عراق میں دو حملوں میں کم از کم 60 افراد ہلاک

نصیریہ تصویر کے کاپی رائٹ NASIRIYAH.ORG
Image caption حملے کی ذمہ داری شدت پسند تنظیم دولتِ اسلامیہ نے قبول کی ہے

جنوبی عراق میں نصیریہ شہر کے قریب دو حملوں میں کم از کم 60 افراد ہلاک ہو گئے ہیں۔

عراقی وزارتِ داخلہ نے ایک ترجمان نے بتایا کہ پہلے حملے میں بندوق برداروں نے ذی قار صوبے کے دارالحکومت نصیریہ کے قریب سڑک کے کنارے واقع ایک ریستوران پر دھاوا بول کر فائر کھول دیا۔

اس کے کچھ ہی دیر بعد ایک قریبی چوکی میں بم دھماکہ ہوا۔ ایک رپورٹ کے مطابق ہلاک ہونے والوں میں کم از کم چار ایرانی بھی شامل ہیں۔

شدت پسند تنظیم دولتِ اسلامیہ نے دعویٰ کیا ہے کہ ان حملوں کے پیچھے اس کا ہاتھ ہے۔

خبررساں ادارے اے ایف پی کے مطابق ایک رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ حملہ آور حشد الشبابی کی وردیوں میں ملبوس تھے۔ یہ شیعہ تنظیم عراقی فوج کے ہمراہ دولتِ اسلامیہ سے لڑ رہی ہے۔

حملہ آوروں نے مقامی وقت کے مطابق دوپہر کو فوج کی گاڑیاں چرائی تھیں۔

پولیس کرنل علی عبدالحسین نے خبررساں ادارے روئٹرز کو بتایا کہ 'ایک حملہ آور نے پرہجوم ریستوران میں خود کو دھماکے سے آرایا اور دیگر مسلح افراد نے وہاں کھانا کھانے والوں پر گرینیڈ پھینکے اور فائرنگ کی۔

مشرقِ وسطیٰ میں بی بی سی کے نامہ نگار ایلن جانسٹن کہتے ہیں کہ دولتِ اسلامیہ کو حالیہ مہینوں میں عراق اور شام دونوں میں ہر محاذ پر پے در پے شکستوں کا سامنا ہے، تاہم وہ اب بھی حملے کرنے کی اہلیت رکھتی ہے۔

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں