شمالی کوریا امریکہ کو نشانہ بنانے کی صلاحیت کے ’انتہائی قریب‘: سی آئی اے

کوریا تصویر کے کاپی رائٹ Reuters

امریکی خفیہ ادارے سی آئی اے کے ڈائریکٹر مائیک پومیے نے خبردار کیا ہے کہ شمالی کوریا امریکہ کو جوہری میزائل سے نشانہ بنانے کی صلاحیت حاصل کرنے کے قریب ہے۔

انھوں نے زور دیا کہ واشنگٹن اب بھی سفارتکاری اور پابندیوں کو ترجیح دے گا لیکن ان کا کہنا تھا کہ عسکری قوت کے استعمال کا آپشن بھی موجود رہے گا۔

شمالی کوریا کا دعویٰ ہے کہ وہ امریکہ کو نشانہ بنانے کی صلاحیت پہلے ہی رکھتا ہے۔

اپ کی ڈیوائس پر پلے بیک سپورٹ دستیاب نہیں
شمالی کوریا میں زندگی کیسی ہے؟

’سفارت کاری جاری رہے گی جب تک پہلا بم نہیں گرتا'

شمالی کوریا بحران: امریکی بمبار طیاروں کی جنگی مشقیں

جمعرات کو واشنگٹن میں ایک تھنک ٹینک فاؤنڈیشن فار ڈیفنس آف ڈیموکریسیز سے خطاب کرتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ شمالی کوریا امریکہ کو نشانہ بنانے کی '(جوہری صلاحیت) حاصل کرنے کے قریب ہے اور امریکی پالیسی کے تناظر میں اس مقصد کو حاصل کرنے کی بلندیوں کو چھو رہا ہے۔'

ان کا کہنا تھا کہ 'اب یہ سوچنے کی بات ہے کہ ہم انھیں روکنے کے لیے کیا حتمی قدم اٹھائیں۔'

مائیک پاؤمپے نے خبردار کیا کہ پیانگ یانگ اس قدر تیزی سے میزائل مہارت بڑھا رہا ہے کہ امریکی انٹیلیجنس کے لیے یہ یقین دہانی مشکل ہے کہ وہ کب کامیاب ہوں گے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images

گذشتہ ہفتے امریکی سیکریٹری خارجہ ریکس ٹلرسن نے بھی صدر ڈونلڈ ٹرمپ سے اصرار کیا تھا کہ وہ شمالی کوریا کے ساتھ تنازع کو سفارتکاری کے ذریعے حل کرنا چاہتے ہیں۔

ان کا یہ بیان صدر ٹرمپ کے اس بیان کے بعد سامنے آیا تھا جس میں انھوں نے کہا کہ وہ کم جونگ ان کے ساتھ مذاکرات کرنے کی کوششوں میں وقت ضائع نہ کریں۔

حالیہ مہینوں کے دوران شمالی کوریا نے بین الاقوامی آرا کو نظر انداز کرتے ہوئے چھ جوہری تجربات کیےہیں اور دو میزائل جاپان کی سرزمین کے اوپر سے داغے ہیں۔

تجزیہ نگاروں کا کہنا ہے کہ رازداری برتنے والا کمیونسٹ ملک اقوام متحدہ کی پابندیوں کے باوجود واضح طور پر جوہری ہتھیار لے جانے والے میزائل تیار کر رہا ہے جو کہ امریکہ کے لیے خطرہ ہو سکتا ہے۔

گذشتہ ماہ کے آخر میں ریکس ٹلرسن نے بتایا تھا کہ امریکہ شمالی کوریا کے ساتھ براہِ راست رابطے میں رہا ہے اور مذاکرات کے امکان پر غور کر رہا ہے۔

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں