’ایسے اسلام کی طرف بڑھ رہے ہیں جو میں دوسرے مذاہب کے لیے جگہ ہو‘

سعودی عرب تصویر کے کاپی رائٹ AFP

سعودی عرب کے ولی عہد محمد بن سلمان کا کہنا ہے کہ وہ سعودی عرب میں ’معتدل اسلام کی واپسی‘ کے لیے کوشاں ہیں۔

یہ بات انھوں نے منگل کو اقتصادیات امور کی ایک کانفرنس کے دوران کہی جو کہ العریبیہ ٹی وی پر براہِ راست دکھائی گئی۔

سعودی عرب میں ’تبدیلی کی لہر‘

سعودی قیادت میں ڈرامائی انقلاب

نئے سعودی ولی عہد کے بارے میں پانچ اہم حقائق

محمد بن سلمان نوجوانوں میں کیوں مقبول ہیں؟

محمد بن سلمان کا کہنا تھا کہ ’سعودی عرب 1979 سے پہلے ایسا نہیں تھا۔ سعودی عرب اور پورے خطے میں مختلف وجوہات کے لیے 1979 کے بعد سے الصحوہ (آگاہی) کی ایک تحریک چلائی گئی۔‘

ان کا کہنا تھا کہ ’ہم اپنی زندگیوں کے آئندہ 30 سال ان تباہ کن عناصر کی نذر نہیں ہونے دیں گے۔ ہم انتہا پسندی کو جلد ہی ختم کردیں گے۔‘

شہزادہ محمد بن سلمان کا کہنا تھا کہ ’ہم پہلے ایسے نہیں تھے۔ ہم اس جانب واپس جا رہے ہیں جیسے ہم پہلے تھے، ایسا اسلام جو کہ معتدل ہے، اور جس میں دنیا اور دیگر مذاہب کے لیے جگہ ہو۔‘

یاد رہے کہ حال ہی میں سعودی عرب کے بادشاہ شاہ سلمان نے شاہی فرمان جاری کیا تھا جس میں خواتین کو ملک میں پہلی بار گاڑی چلانے کی اجازت دی گئی ہے۔

شاہی فرمان کے مطابق متعلقہ وزارت اس بارے میں ایک ماہ میں تجاویز دے گی اور یہ حکم 24 جون 2018 تک ہر صورت میں نافذالعمل ہو جائے گا۔

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption محمد بن سلمان کا کہنا تھا کہ 'سعودی عرب 1979 سے پہلے ایسا نہیں تھا۔ سعودی عرب اور پورے خطے میں مختلف وجوہات کے لیے 1979 کے بعد سے الصحوہ (آگاہی) کی ایک تحریک چلائی گئی۔'

شہزادہ محمد بن سلمان کو ملک کے نئے ترقیاتی پلان وژن 2030 کا بانی بھی مانا جاتا ہے۔ سعودی حکومت کی کوشش ہے کہ ملک کو اقتصادی طور پر تیل پر انحصار کم کرنا پڑے۔

اس ضمن میں شہزادہ سلمان نے گذشتہ روز ایک اقتصادی میگا سٹی کا اعلان بھی کیا ہے جو کہ مصر اور اردن کے سرحدی علاقے میں 500 بلین ڈالر کی مدد سے تعمیر کی جائے گی۔

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں