یمن کی سرحد کے قریب ہیلی کاپٹر حادثے میں سعودی شہزادہ ہلاک

منصور بن مقرن تصویر کے کاپی رائٹ Al Arabiya English/TWITTER

سعودی عرب کے سرکاری میڈیا کے مطابق یمن کی سرحد کے قریب ایک ہیلی کاپٹر گر کر تباہ ہو گیا ہے جس پر سوار ایک سعودی شہزادے سمیت دیگر کئی اعلیٰ عہدیدار ہلاک ہو گئے ہیں۔

سعودی نشریاتی ادارے العریبیہ کے مطابق ہلاک ہونے والے شہزادے منصور بن مقرن ہیں جو کہ سعودی عرب کے سابق ولی عہد مقرن ال سعود کے بیٹے اور صوبے عسیر کے نائب گورنر تھے۔

تاحال ہیلی کاپٹر کے گرنے کی وجہ معلوم نہیں ہو سکی ہے۔

کرپشن کے خلاف جنگ، گیارہ سعودی شہزادے گرفتار

شہزادہ الولید بن طلال کون ہیں؟

خیال رہے کہ سعودی عرب یمن میں حوثی باغیوں کے خلاف جاری جنگ میں بین الاقوامی اتحاد کی قیادت کر رہا ہے۔

گذشتہ روز سعودی عرب کی فوج نے یمن کی جانب سے ریاض کی طرف ایک میزائل حملے کو ناکام بنانے کا دعویٰ کیا تھا۔

یمن میں حوثی باغیوں سے منسلک ٹی وی چینل کا کہنا تھا کہ میزائل ایئر پورٹ کی جانب داغا گیا تھا۔

سرکاری نیوز چینل ال اخباریہ نے شہزادہ منصور بن مقرن کی ہلاکت کی خبر نشر کی۔ تاہم تاحال ہیلی کاپٹر پر سوار دیگر افراد کے بارے میں کچھ نہیں کہا گیا ہے۔

یہ حادثہ ایک ایسے وقت میں پیش آیا ہے جب گذشتہ روز ہی سعودی عرب میں نئی اینٹی کرپشن کمیٹی نے گیارہ شہزادوں، چار موجودہ اور 'درجنوں' سابق وزرا کو گرفتار کر لیا ہے۔

گرفتار ہونے والوں میں شہزادہ الولید بن طلال بھی شامل ہیں۔

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں