غیرمستحکم مشرق وسطیٰ، ایک غیریقینی صورتحال کہ آنے والا وقت کیا منظر پیش کرے گا

سعد الحریری تصویر کے کاپی رائٹ EPA
Image caption سعد الحریری نے کہا کہ انھیں ڈر ہے کہ وہ قتل کر دیے جائیں گے جس کا الزام انھوں نے ایران اور حزب اللہ پر لگایا

ریاض میں تلواروں اور دور مار میزائلوں کی ایک رات نے غیرمستحکم مشرق وسطیٰ میں ایک بھونچال اور اس بارے میں ایک غیریقینی صورتحال پیدا کر دی ہے کہ آنے والا وقت کیا منظر پیش کرے گا۔

سنیچر کی رات سعودی دارالحکومت ریاض میں اچانک پیش آنے والے تین واقعات کا براہ راست آپس میں کوئی تعلق نہیں لیکن جو بھی کہا جائے، یہ ایک ایسے وقت میں جب سعودی عرب اور امریکہ سمیت اس کے اہم اتحادی اپنے کٹر مخالف ایران کا مقابلہ کرنے کے لیے یکجہتی کا مظاہرہ کر رہے ہیں، انتہائی اہمیت رکھتے ہیں۔

پہلی اور ممکنہ طور پر خطے کے لیے سب سے زیادہ دھماکہ خیز چیز سعد الحریری کا ریاض میں کیا گیا چونکا دینے والا اعلان تھا کہ وہ لبنان کے وزیر اعظم کے عہدے سے استعفی دے رہے ہیں۔

’شاہ سلمان اور ولی عہد جانتے ہیں کہ وہ کیا کر رہے ہیں‘

سعودی عرب: کرپشن کےخلاف کریک ڈاؤن یا دشمنیاں

’وہ تین ہفتے تک میرا ریپ کرتا رہا‘

باخبر مبصرین کا کہنا ہے کہ انھیں بیروت سے بلایا گیا اور پھر ان کے سعودی اتحادیوں نے انھیں 'برطرف' کر دیا۔ عرب حکومت کے وزرا نے حریری کے ٹی وی پر خطاب کے بارے میں مجھے بتایا کہ 'یہ ان کی اپنی زبان نہیں تھی۔'

واضح طور پر پریشان نظر آنے والے حریری نے اپنے ہی ملک میں اپنی زندگی کو لاحق خطرات کے بارے میں بات کی۔ انھوں نے 'بدامنی اور بربادی' کا ذمہ دار ایران کو ٹھہرایا۔ انھوں نے الزام لگایا کہ ایران کی لبنانی اتحادی حزب اللہ جو بڑی شیعہ ملیشیا اور طاقتور سیاسی قوت ہے، ریاست کے اندر ریاست بنا رہی ہے۔

بیروت کے کارنیگی مڈل ایسٹ سینٹر سے وابستہ یزید سایغ کا اس بارے میں کہنا ہے کہ 'سعودی عرب نے بلاہدف میزائل داغا ہے۔'

ان کے مطابق اس کا مرکزی ہدف لبنان نہیں تھا لیکن ریاض اور اس کے اتحادیوں کی نظر میں ایران خطے میں بری طرح عدم استحکام پھیلا رہا ہے۔

اس سے لبنان کے سیاسی منظرنامہ کو سب سے پہلے دھچکا پہنچا اور قومی اتحاد کی متوازن حکومت جس میں حزب اللہ اور حریری کا سنی فرقہ شامل ہے، ختم ہو گئی۔

تصویر کے کاپی رائٹ EPA
Image caption لبنانیوں نے بیروت کی ایک کافی شاپ پر تاش کھیلتے اور شیشہ پیتے ہوئے حزب اللہ کے رہنما حسن نصراللہ کا ٹی وی پر خطاب سنا

سعد الحریری کے اعلان کے چند ہی گھنٹوں بعد ایک اصلی دور مار میزائل یمن کے حوثی باغیوں کی جانب سے فائر کیا گیا جسے ریاض کے شاہ خالد بین الاقوامی ہوائی اڈے کے قریب مار گرایا گیا۔

اس سے سعودی عرب کا وہ خوف اور بڑھ گیا جس کا وہ اظہار کر چکا ہے کہ ایران اس کی سرحد تک پہنچ چکا ہے اور اب اس کے پار بھی۔

شاہ سلمان کے تین سال میں کیا کچھ بدلا؟

’سعد الحریری کا استعفی سعودی دباؤ کا نتیجہ ہے‘

اختتامِ ہفتہ پر متحدہ عرب امارات میں ہونے والے ایک فورم کے موقع پر عریبیہ فاؤنڈیشن کے ایگزیکیٹو ڈائریکٹر علی شہابی نے اپنے خیالات کا اظہار کرتے ہوئے کہا تھا کہ 'یہ میزائل تو صرف شروعات ہے۔ اگر مزید پانچ سال یہی صورتحال رہی تو 40 ہزار میزائل ریاض کو نشانہ بنائیں گے۔'

اس وقت جب کہ خطے میں اور اس سے کہیں آگے تک سیاسی بھنبھناہٹ جاری تھی تیسرا حیرت انگیز دھماکہ آدھی رات کو ہوا جب انسدادِ بد عنوانی مہم کے تحت درجنوں شہزادوں، ارب پتیوں اور سابق وزرا کو گرفتار کر لیا گیا اور چند کو برطرف کر دیا گیا۔

یہ ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان کی جانب سے امور سلطنت پر اپنی گرفت مضبوط کرنے کے سلسلے میں ملک کے اندر اور باہر دیا جانے والا اب تک کا سب سے زیادہ دلیرانہ اشارہ تھا۔

خطے کے ایک سینیئر عرب اہلکار کا کہنا ہے کہ 32 سالہ ولی عہد کی جانب سے یہ صفائی 'ایک پیغام ہے کہ کوئی بھی قانون سے بالاتر نہیں ہے، یا واضح طور پر ان کے قانون سے۔'

تصویر کے کاپی رائٹ EPA
Image caption سعد الحریری اور علی اکبر ولایتی ملاقات کر رہے ہیں

سعودی ذرائع کا کہنا ہے کہ ریاض گذشتہ برس کے دوران سعد الحریری کے ساتھ بےصبری سے پیش آیا ہے۔ اس دوران وہ لبنان کی نازک اتحادی حکومت پر حزب اللہ کے اثر و رسوخ کا راستہ روکنے کی کوشش کر رہے تھے۔

گذشتہ برس 30 رکنی کابینہ کی تشکیل کے لیے مشکلوں سے کیے جانے والے معاہدے نے برسوں سے جاری سیاسی تعطل کو ختم کیا تھا۔ اس کا مقصد پڑوسی ملک شام میں جاری جنگ کی وجہ سے پیدا ہونے والی کشیدگی کے اثرات کو کم کرنا تھا جہاں سعودی عرب اور ایران حریفوں کی مدد کر رہے ہیں۔

الشہابی کا کہنا تھا کہ 'یہ قدم اٹھا کر حریری نے اس ریاست کے لیے عزت کمائی ہے جس پر درحقیقت حزب اللہ کا قبضہ ہے۔'

حریری کی حکومت کے لیے آخری تنکا جمعے کو بیروت میں حریری کی ایران کے رہبر اعلی آیت اللہ علی خامنہ ای کے سینیئر مشیر علی اکبر ولایتی کے ساتھ ملاقات ثابت ہوئی۔

لبنانی اور ایرانی ذرائع ابلاغ نے اکبر ولایتی کی جانب سے لبنان کی اتحادی حکومت کے قیام کو 'عظیم کامیابی' قرار دیے جانے کو شہ سرخیوں میں جگہ دی۔ اس کے فوراً بعد سعد حریری کے قریبی ساتھیوں کے مطابق 'وہ ایک بوکھلائے ہوئے شخص تھے جو بہت جلدی میں تھے۔'

سعد حریری کے قریبی ساتھیوں میں سے ایک نے بتایا 'انھوں نے ہمیں جمعے اور سنیچر کی اپنی تمام مصروفیات منسوخ کرنے کا کہا اور چلے گئے۔'

اس کے بعد شدت سے قیاس آرائیاں کی جا رہی ہیں کہ آیا لبنانی اور سعودی شہریت کے حامل سعد الحریری بھی انسداد بدعنوانی مہم کی زد میں آ گئے ہیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ EPA
Image caption سعودی عرب کے شاہ سلمان سابق لبنانی وزیر اعظم سعد الحریری سے ملاقات کر رہے ہیں

سب سے بڑا سوال یہ ہے کہ آگے کیا ہوگا؟

یزید سایغ کا کہنا ہے کہ 'سعودی عرب نے لبنان میں کچھ شروع تو کردیا ہے لیکن وہ وہاں اقتدار کے تمام اختیارات پر قابو نہیں رکھتا۔'

مشرق وسطیٰ میں سفارتکاری کے وسیع تجربے کے حامل ایک مغربی سفارتکار نے اگلے ممکنہ اقدامات کے بارے میں بتاتے ہوئے کہا کہ ان میں بڑے سعودی بینکوں کی رقوم نکلوانا، تجارتی پابندیاں، لبنانی فوج کی کارروائیاں ہو سکتی ہیں جس کی تربیت اور تعمیر کے لیے امریکہ اور برطانیہ کافی عرصے سے مدد کر رہے ہیں تاکہ وہ حزب اللہ کی فوج کے مدمقابل کھڑی ہو سکے۔

گذشتہ ماہ امریکی ایوانِ نمائندگان نے حزب اللہ پر نئی پابندیاں عائد کرنے کی تائید کی ہے۔ یہ ٹرمپ انتظامیہ کی اس مہم کا حصہ ہے جس میں وہ ایران پر مزید دباؤ بڑھانا چاہتی ہے۔

ان اقدامات کو ابھی قانون کی شکل اختیار کرنی ہے جن میں یورپی یونین کی وہ قرارداد بھی شامل ہے جس میں حزب اللہ کے نہ صرف فوجی بلکہ سیاسی دھڑے کو بھی دہشت گرد تنظیم قرار دینے کی اپیل کی گئی ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption حزب اللہ شام میں جاری خانہ جنگی کے دوران صدر بشار الاسد کی فورسز کے ہمراہ لڑائی میں مصروف ہے

وزیرِ اعظم بن یامین نتن یاہو گذشتہ ہفتے اپنے سرکاری دورے پر لندن میں موجود تھے، نے کہا کہ 'اب وقت آ گیا ہے کہ عالمی برادری ایران کی جارحیت کے خلاف سخت کارروائی کرے جو شام کو ایک اور لبنان بنانا چاہتا ہے۔'

حزب اللہ کے رہنما حسن نصراللہ غیرمستحکم لبنان میں اعصاب کو قابو میں رکھنا چاہتے ہیں۔ انھوں نے زور دیا کہ سعودی عرب کے سعد الحریری پر 'تھوپے' جانے والے فیصلے بعد 'برداشت اور سکون' کا مظاہرہ کرنا ہو گا۔

ایران بھی خطے میں کشیدگی پیدا کرنے کے منصوبوں کی تیاری کے الزامات لگا رہا ہے۔

ہمیشہ سے کئی بحرانوں کے شکار غیر مستحکم پڑوس کے برابر میں واقع ملک کے لیے فکرمندی کی بات صرف جنگ نہیں بلکہ کسی تنازعے میں حادثاتی طور پر پھنس جانا بھی ہے۔

انٹرنیشنل کرائسس گروپ کے جین میری گونہینو کا کہنا ہے کہ 'حزب اللہ کو اپنی سرخ لکیر کا پتہ ہے، اور ہر اسرائیلی جرنیل فوجی کارروائی سے احتیاط برتے گا۔ لیکن آپ کو یقین نہیں کہ سیاست دان کیا کریں گے۔'

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption لبنان کے صدر کا کہناہے کہ وہ بیروت لوٹنے پر سعد الاحریری سے انکا موقف سننا چاہتے ہیں

اب موجودہ صورتحال کے بعد تمام حرکات کا محتاط انداز میں مشاہدہ کیا جائے۔

عرب حکومت کے وزیر کا کہنا ہے کہ 'لبنان کے بحران میں تیزی آنے کے بعد ولی عہد کو ملک کے اندر گرفتاریوں کو ملتوی کر دینا چاہیے تھا۔ اب کئی چیزیں ہوا میں ہیں۔'

دیگر غیر متفق ہیں

ایک سعودی مبصر کا کہناہے کہ 'بہتر ہو گا کہ اسے ایک رات میں نمٹا دیا جائے۔ یہ مستقل رستا رہا ہے۔'

اور گذشتہ ہفتے کے فیصلہ کن دن کی طرح یہ سب یکجا ہو کر کچھ مزید بڑی شکل اختیار کر لے گا۔

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں