سعودی عرب میں ’گرفتار افراد میں سے اکثریت معافی کے بدلے سمجھوتہ کرنے پر تیار‘

سعودی عرب تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption زیرِ حراست افراد کو ریاض کے رٹز کارلٹن ہوٹل میں رکھا گیا ہے

سعودی عرب کے اٹارنی جنرل کا کہنا ہے کہ کرپشن کے الزامات میں گرفتار افراد میں سے زیادہ تر نے حکام کے ساتھ معافی کے بدلے سمجھوتہ کرنے پر رضامندی ظاہر کی ہے۔

سعودی اٹارنی جنرل شیخ سعود المجیب کی جانب سے جاری ہونے والے بیان کے مطابق 320 افراد کو پوچھ گچھ کے لیے بلایا گیا جن میں اس وقت 159 افراد حراست میں ہیں۔

بیان کے مطابق جنھوں نے الزامات سے انکار کیا یا سمجھوتہ کرنے سے انکار کیا ہے ان کے خلاف قانونی کارروائی ہو گی۔

ابھی تک گرفتار کیے جانے والے افراد پر الزامات کی نوعیت واضح نہیں تاہم اٹارنی جنرل کے بیان میں کہا گیا ہے کہ’بین الاقوامی اصولوں کے طریقۂ کار کو اپنایا گیا‘۔

سعودی عرب: کرپشن کےخلاف کریک ڈاؤن یا دشمنیاں

سعودی مہم سے چھلکتی ولی عہد کی بےرحمی

دوسری جانب سعودی عرب کے ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان نے ان الزامات مضحکہ انگیز قرار دیتے ہوئے مسترد کیا ہے جس میں کہا گیا تھا کہ انسداد بدعنوانی مہم کا مقصد اقتدار پر گرفت مضبوط کرنا ہے۔

ولی عہد نے امریکی اخبار نیویارک ٹائمز کو بتایا ہے کہ گرفتار کیے جانے والے افراد میں سے زیادہ تر پہلے ہی ان سے وفاداری کا اعلان کر چکے ہیں۔

اس سے پہلے گذشتہ ہفتے ہی کرپشن کے الزامات میں گرفتار کیے گئے شہزادہ متعب بن عبداللہ کو رہا کر دیا گیا تھا۔

ایک وقت تھا کہ شہزادہ متعب کے سعودی تخت تک پہنچنے کے بارے میں توقع کی جاتی تھی تاہم اب انھیں اپنی رہائی کے لیے ایک ارب ڈالر کا معاہدہ کرنا پڑا۔

یاد رہے کہ شہزادہ متعیب ان 200 اہم سیاسی اور کارروباری شخصیات میں سے ایک ہیں جنھیں چار نومبر کو گرفتار کیا گیا تھا۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption گذشتہ ہفتے شہزادہ متعب کے علاوہ تین اور افراد کی سعودی حکومت کے رہائی کی شرائط طے پا گئی تھیں

64 سالہ شہزادہ متعب سابق بادشاہ عبداللہ کے بیٹے ہیں اور انھیں گرفتاری سے تھوڑی دیر قبل ہی ان کے عہدے سے ہٹا دیا گیا تھا۔

سعودی عرب میں نئی انسداد بدعنوانی کمیٹی نے 11 شہزادوں، چار موجودہ اور ’درجنوں‘ سابق وزرا کو گرفتار کر لیا گیا تھا۔ گرفتار ہونے والوں میں معروف سعودی کاروباری شخصیت شہزادہ الولید بن طلال بھی شامل تھے۔

یہ گرفتاریاں اس انسداد بدعنوانی کمیٹی کی تشکیل کے چند گھنٹوں بعد کی گئیں جس کے سربراہ ولی عہد محمد بن سلمان ہیں۔

اس موقعے پر سعودی عرب کے اٹارنی جنرل نے کہا تھا کہ ملک میں حالیہ عشروں کے دوران ایک کھرب ڈالر کی خردبرد ہوئی ہے۔

اپ کی ڈیوائس پر پلے بیک سپورٹ دستیاب نہیں
سعودی عرب کے دارالحکومت ریاض کے رٹز کارلٹن ہوٹل میں درجنوں اہم سعودی شخصیات زیرحراست ہیں۔

گرفتار افراد کو دارالحکومت ریاض کے رٹز کارلٹن ہوٹل میں رکھا گیا۔

یہ گرفتاریاں گذشتہ برسوں میں سعودی عرب سے آنے والی اہم ترین خبروں میں سے ایک ہے۔ اس کے باوجود سعودی عرب میں اس پر کھلے عام بہت کم بات ہو رہی ہے۔

اسی بارے میں