جوہری ہتھیاروں سے متعلق روسی صدر کا اعلان امریکی خدشات کی تصدیق ہے: امریکہ

تصویر کے کاپی رائٹ Ronald Grant
Image caption وائٹ ہاؤس کی ترجمان سارہ سینڈرز نے کہا کہ امریکہ اپنے دفاعی اخراجات میں اضافہ کر کے اس بات کو یقینی بنائے گا

امریکہ کا کہنا ہے کہ جوہری ہتھیاروں سے متعلق روسی صدر کا اعلان امریکہ کے خدشات کی تصدیق کرتا ہے۔

روس کے صدر ولادی میر پوتن نے جمعرات کو اپنے ایک خطاب میں کہا تھا کہ اُن کے ملک نے ایسے ’ناقابل تسخیر‘ جوہری ہتھیار تیار کر لیے ہیں جو دنیا میں کہیں بھی مار کر سکتے ہیں۔

یہ بھی پڑھیے

ٹرمپ، جوہری ہتھیار اور تحفظات

دنیا کے جوہری ہتھیار کہاں کہاں ہیں؟

روس کے صدر کے اس بیان پر ردعمل دیتے ہوئے امریکی محکمۂ خارجہ کی ترجمان ہیدر نوریٹ نے کہا ہے کہ صدر پوتن کا یہ بیان اُن معلومات کی تصدیق ہے جن کے بارے میں امریکہ پہلے سے جانتا تھا۔

ادھر وائٹ ہاؤس کی ترجمان سارہ سینڈرز نے کہا کہ امریکہ اپنے دفاعی اخراجات میں اضافہ کر کے اس بات کو یقینی بنائے گا کہ اس کی دفاعی صلاحیت دنیا میں کسی سے بھی کم نہ ہو۔

روسی صدر پوتن نے نئے جوہری ہتھیاروں کی تیاری کا دعویٰ اپنے چوتھے صدارتی انتخابات سے قبل کیا اور یہ نئے صدارتی انتخاب سے قبل صدر پوتن کا آخری صدارتی خطاب تھا۔

صدر پوتن چوتھی بار صدر ’منتخب‘ ہونے سے صرف 17 روز ہی دور ہیں۔

روس کے سرکاری ٹی وی چینل پر صدر پوتن کی تقریر کے دوران ان دو ہتھیاروں کی ویڈیو چلائی جنھیں صدر پوتن نے بطور نئے ’ناقابل تسخیر‘ ہتھیار قرار دیا تھا۔

پوتن تصویر کے کاپی رائٹ YURI KADOBNOV/Getty Images
Image caption روسی صدر پوتن نے نئے جوہری ہتھیاروں کی تیاری کا دعویٰ اپنے چوتھے صدارتی انتخابات سے قبل کیا

انھوں نے کہا کہ روس ایسے ڈرون بھی تیار کر رہا ہے جنھیں آبدوز سے چھوڑا جا سکے گا۔ یہ ڈرون جوہری حملہ بھی کر سکیں گے۔

انھوں نے کہا کہ روس کے اس نئے ہتھیار کو یورپ اور ایشیا میں جال کی طرح بچھا امریکی دفاعی نظام بھی نہیں روک سکتا ہے۔

پوتن نے روسی پارلیمان کے دونوں ایوانوں کے مشترکہ اجلاس سے دو گھنٹے خطاب کیا۔

یہ بھی پڑھیے

کیا انڈیا اور چین کی جنگ میں جوہری ہتھیار استعمال ہو سکتے ہیں؟

’جوہری ہتھیار متعارف کروانے والے کو لیڈر کہا جا رہا ہے‘

ایران کے پاس کبھی بھی جوہری ہتھیار نہیں ہوں گے: ٹرمپ

امریکہ کو جواب؟

تجزیہ کاروں کے مطابق روسی صدر کا یہ بیان امریکہ کے صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے فوجی طاقت بڑھانے والے بیان کے جواب میں آیا ہے۔ امریکہ نے پچھلے مہینے جوہری طاقت کو بڑھانے اور چھوٹے ایٹمی ہتھیارتیار کرنے کی بات کی تھی۔

امریکہ کے اس بیان کے بارے میں یہ کہا گیا تھا کہ یہ روس کو چیلنج کرنے کے لیے دیا گیا۔

چین اور امریکہ بھی ایسے ہی میزائل تیار کرنے کی کوشش کر رہے ہیں جو دنیا میں کہیں بھی مار کر سکیں۔ پوتن نے اپنے خطاب میں یہ بھی کہا ہے کہ انہوں نے اپنی فوجی طاقت کو دنیا میں امن لانے کے لیے بڑھایا ہے۔

حالانکہ پوتن نے کہا ہے کہ اگر کوئی روس کے خلاف جوہری ہتھیار نکالے گا تو روس دوگنی طاقت سے اس کا جواب دے گا۔

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں